NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akbar ka lahoo

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Nasir Abbas


akbar ka lahoo sheh ki abaa tak pahunch gaya
dastaar se wo maa ki rida tak pahunch gaya

aise giri hai qaime may akbar ki laash par
zainab ka khoon khaake shifa tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

laila ye roke kehti thi akbar kahan ho tum
zaalim ka haath meri rida tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

awaaz ran se aayi ke baba mai gir pada
girta hua hussain sada tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

seene may naiza tod ke kehta tha ye layeen
dekho hussain apni qaza tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

maula zaeef hogaye kuch dayr may magar
akbar ka laasha aale aba tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

jis haath ne giraya tha humshakle mustafa
naiza liye wo haath rida tak pahunch gaya
akbar ka lahoo sheh ki...

اکبر کا لہو شہ کی عبا تک پہنچ گیا
دستار سے وہ ماں کی ردا تک پہنچ گیا

ایسے گری ہے خیمے میں اکبر کی لاش پر
زینب کا خون خاک شفا تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔

لیلیٰ یہ روکے کہتی تھی اکبر کہاں ہو تم
ظالم کا ہاتھ میری ردا تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔

آواز رن سے آی کہ بابا میں گر پڑا
گرتا ہوا حسین صدا تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔

سینے میں نیزہ توڑ کے کہتا تھا یہ لعیں
دیکھو حسین اپنی قضاء تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔

مولا ضعیف ہوگیا کچھ دیر میں مگر
اکبر کا لاشہ آل عبا تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔

جس ہاتھ نے گرایا تھا ہمشکل مصطفیٰ
نیزہ لیے وہ ہاتھ ردا تک پہنچ گیا
اکبر کا لہو شہ کی۔۔۔