NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abid ko jahan ghash

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Bilal Kazmi


abid ko jahan ghash aata hai
durron se jagaya jaata hai

ek phool hai jisko kaanton par
din raat chalaya jaata hai

abbas ki ghairat se aksar
abid ki aseeri poochti hai
kya chaar baras ki behna ko
zindan may sulaya jaata hai
abid ko jahan ghash...

sadaat ke qaime jalte hai
sholo may ghiri hai aale nabi
phir aaj nabi ki beti par
darwaza giraya jaata hai
abid ko jahan ghash...

reh reh ke shahe deen dekhte hai
naize se sakina ki jaanib
lagta hai ke pushte naaqa se
bachi ko giraya jaata hai
abid ko jahan ghash...

bibi ko khareeb e laashe jari
durron ki izziyat dete hai
abbas ko tadpane ke liye
zainab ko sataya jaata hai
abid ko jahan ghash...

ghairat ke sabab jis bibi ne
ghar may bhi na dekha aaina
beparda usay laane ke liye
darbar sajaya jaata hai
abid ko jahan ghash...

bin byaah ke akbar maare gaye
armaan na nikle bano ke
taboot pe akbar ke sehra
kuch yun bhi chadaya jaata hai
abid ko jahan ghash...

wo noke sina par ghairat se
rukta hi nahi gir jaata hai
jab jab bhi sare abbas e jari
naize pe chadaya jaata hai
abid ko jahan ghash...

parde may bilal e karbobala
roye na mera maula kyun kar
afsos ke turbat may ab tak
zehra ko rulaya jaata hai
abid ko jahan ghash...

عابد کو جہاں غش آتا ہے
دروں سے جگایا جاتا ہے

اک پھول ہے جس کو کانٹوں پر
دن رات چلایا جاتا ہے

عباس کی غیرت سے اکثر
عابد کی اسیری پوچھتی ہے
کیا چار برس کی بہنا کو
زنداں میں سلایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

سادات کے خیمے جلتے ہیں
شعلوں میں گھری ہے آل نبی
پھر آج نبی کی پر
دروازہ گرایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

رہ رہ کے شہ دیں دیکھتے ہیں
نیزے سے سکینہ کی جانب
لگتا ہے کہ پشت ناقہ سے
بچی کو گرایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

بی بی کو قریب لاش جری
دروں کی اذیت دیتے ہیں
عباس کو تڑپنے کے لئے
زینب کو ستایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

غیرت کے سبب جس بی بی نے
گھر میں بھی نہ دیکھا آیینہ
بے پردہ اسے لانے کے لئے
دربار سجایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

بن بیاہ کہ اکبر مارے گۓ
ارمان نہ نکلا بانو کا
تابوت پہ اکبر کے سہرا
کچھ یوں بھی چڑھایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

وہ نوک سناں پر غیرت سے
رکتا ہی نہیں گر جاتا ہے
جب جب بھی سر عباس جری
نیزے پہ چڑھایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔

پردے میں بلال کربوبلا
روے نہ میرا مولا کیونکر
افسوس کہ تربت میں اب تک
زہرا کو رلایا جاتا ہے
عابد کو جہاں غش۔۔۔