NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas sa bhai

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


jab huye baazu e abbas qalam darya par
gir ke thanda hua hazrat ka alam darya par
ghark e khoon hogaya wo behre karam darya par
gul tha zakhmi hua saqqa e haram darya par
mashk ko daanton may pakde hui yun laata hai
dahne sher may jis tarha shikaar aata hai

algarz laasha e abbas pe aaye maula
sar ko zaanu pe rakha aur ye ro ro ke kaha
bhai to aaj hamay kehdo khudara bhaiya
nazha may bhai ko abbas ne bhai bola
aakhri saans li aur daare fana chod diya
bhai ne bhai ki aagosh may dam tod diya

abbas haye abbas abbas haye abbas

hazrat se juda hogaya abbas sa bhai
pardes may looti gayi hyder ki kamayi
hazrat se juda hogaya...

sheh ne ye kaha laasha e saqqa e haram se
baba ki tarha tum bhi juda hogaye hum se
do baar yateemi meri behno pe hai aayi
hazrat se juda hogaya...

mazloom se maqtal may chala hi nahi jaata
jab khaak pe girte hai utha bhi nahi jaata
ghazi ki shahadat ne kamar aisi jhukayi
hazrat se juda hogaya...

bachi ne kaha shaah se farz apna nibhaun
nazdeek agar hai koi basti to mai jaaun
ammu ka kafan layegi ammu ki fidayi
hazrat se juda hogaya...

abbas ke bachon se mai sharminda rahunga
maqtal se utha laaya hoo har ek ka laasha
afsos ke abbas ki mayyat na uthayi
hazrat se juda hogaya...

khat khaak pe dete thay qadam zeen se jiske
maidan may us sher ke itne huwe tukde
sajjad ne chadar may wo mayyat hai uthayi
hazrat se juda hogaya...

darya bhi tadapne laga ye dekh ke manzar
yaad aane laga seena e hamshakle payambar
jab mashk kate haath se maula ne chudayi
hazrat se juda hogaya...

sadiyon se hai taari ye fiza ranj o alam ki
ye chand jo ojhal hua nazron se haram ki
phir saani e zehra ne kahan eid manayi
hazrat se juda hogaya...

ammu ki judayi pe bohat roye hai baba
samjhaati hai ro ro ke ye bachon ko sakina
ab dena nahi koi bhi pani ki duhayi
hazrat se juda hogaya...

har matami seene may bapa hoga talatum
is saal tera jaana to mushkil hai takallum
nauhe ki magar karbobala tak hai rasayi
hazrat se juda hogaya...

جب ہوے بازوے عباس قلم دریا پر
گر کے ٹھنڈا ہوا حضرت کا الم دریا پر
غرق خوں ہوگیا وہ بہر کرم دریا پر
غل تھا زخمی ہوا سقاے حرم دریا پر
مشک کو دانتوں میں پکڑے ہوے یوں لاتا ہے
داہنے شیر میں جس طرح شکار آتا ہے

الغرض لاشہء عباس پہ آے مولا
سر کو زانوں پہ رکھا اور یہ رو رو کے کہا
بھای تو آج ہمیں کہہ دو خدارا بھیا
نزع میں بھای کو عباس نے بھای بولا
آخری سانس لی اور دار فنا چھوڑ دیا
بھای نے بھای کی آغوش میں دم توڑ دیا

عباس ہاے عباس عباس ہاے عباس

حضرت سے جدا ہوگیا عباس سا بھای
پردیس میں لوٹی گیء حیدر کی کمائی
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

شہ نے یہ کہا لاشہء سقاے حرم سے
بابا کی طرح تم بھی جدا ہوگےء ہم سے
دو بار یتیمی میری بہنوں پہ ہے آی
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

مظلوم سے مقتل میں چلا ہی نہیں جاتا
جب خاک پہ گرتے ہیں اٹھا بھی نہیں جاتا
غازی کی شہادت نے کمر ایسی جھکای
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

بچی نے کہا شاہ سے فرض اپنا نبھاؤں
نزدیک اگر ہے کوئی بستی تو میں جاؤں
عمو کا کفن لاے گی عمو کی فدائی
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

عباس کے بچوں سے میں شرمندہ رہوں گا
مقتل سے اٹھا لایا ہوں ہر ایک کا لاشہ
افسوس کے عباس کی میت نہ اٹھای
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

خط خاک پہ دیتے تھے قدم زین سے جس کے
میدان میں اس شیر کے اتنے ہوے ٹکڑے
سجاد نے چادر میں وہ میت ہے اٹھای
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

دریا بھی تڑپنے لگا یہ دیکھ کے منظر
یاد آنے لگا سینۂ ہمشکل پیمبر
جب مشک کٹے ہاتھ سے مولا نے چھڑای
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

صدیوں سے ہے طاری یہ فضا رنج و الم کی
یہ چاند جو اوجھل ہوا نظروں سے حرم کی
پھر ثانی زہرا نے کہاں عید منائی
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

عمو کی جدائی پہ بہت روے ہیں بابا
سمجھاتی ہے رو رو کے یہ بچوں کو سکینہ
اب دینا نہیں کوئی بھی پانی کی دہای
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔

ہر ماتمی سینے میں بپا ہوگا طلاطم
اس سال تیرا جانا تو مشکل ہے تکلم
نوحے کی مگر کربوبلا تک ہے رسائی
حضرت سے جدا ہوگیا۔۔۔