NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas ki behno ne

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Sajjad Mir


haye abbas ki behno ne na paayi chadar
shaam tak naize pe deti thi duhayi chadar

jiske baba ne udhayi thi rida kaabe ko
uski beti ko kisi ne na udhayi chadar
haye abbas ki behno...

bas yehi kehti thi abbas ke sar se zainab
mere bhai mere bhai mere bhai chadar
haye abbas ki behno...

sharm se chup gayi sajjad ke peeche zainab
hind zindan may jo odhe huwe aayi chadar
haye abbas ki behno...

paon khat dete rahe door talak bachi ke
shimr ne aise sakina se chudayi chadar
haye abbas ki behno...

gir padi khaak pe abbas ki maa sadme se
apne baazu se jo zainab ne hatayi chadar
haye abbas ki behno...

haye rote huwe zainab ne kiya shukre khuda
sar pe sughra ke nazar jis ghadi aayi chadar
haye abbas ki behno...

zindagi may na udha paye magar abid ne
qabr par bali sakina ki udhayi chadar
haye abbas ki behno...

mir sajjad jo loota hua asbaab mila
pehle sajjad ne aankhon se lagayi chadar
haye abbas ki behno...

ہاے عباس کی بہنوں نے نہ پای چادر
شام تک نیزے پہ دیتی تھی دہائی چادر

جس کے بابا نے اڑھای تھی ردا کعبے کو
اسکی بیٹی کو کسی نے نہ اڑھای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

بس یہی کہتی تھی عباس کے سر سے زینب
میرے بھای میرے بھای میرے بھای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

شرم سے چھپ گیء سجاد کے پیچھے زینب
ہند زنداں میں جو اوڑھے ہوے آی چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

پاؤں خط دیتے رہے دور تلک بچی کے
شمر نے ایسے سکینہ سے چھڑای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

گر گئی خاک پہ عباس کی ماں صدمے سے
اپنے بازو سے جو زینب نے ہٹای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

ہاے روتے ہوئے زینب نے کیا شکر خدا
سر پہ صغرا کے نظر جس گھڑی آی چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

زندگی میں نہ اڑھا پاے مگر عابد نے
قبر پر بالی سکینہ کی اڑھای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔

میر سجاد جو لوٹا ہوا اسباب ملا
پہلے سجاد نے آنکھوں سے لگای چادر
ہاے عباس کی بہنوں۔۔۔