NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aaj baghdad may

Nohakhan: Mir Hassan Mir
Shayar: Mir Takallum


aaj baghdad may koi qaidi
hogaya hai reha raza maula
pul pe tere ghareeb baba ka
hai jazana rakha raza maula
aaj baghdad may...

ek bibi sarhane baithi hai
kisne jaane usay khabar ki hai
haath pehlu pe apne rakhe huwe
aayi hai fatema raza maula
aaj baghdad may...

raat se pul pe laasha rakha hai
jo guzarta hai ispe hasta hai
bebasi par tumhare baba ki
ro rahi hai qaza raza maula
aaj baghdad may...

haal ache nahi hai mayyat ke
aaja ejaaz se imamat ke
shehr e baghdad se madine ka
hai bahot faasla raza maula
aaj baghdad may...

ek manadi nida ye deta hai
raafziyon ka maula maara gaya
aaj aulaad par mohamed ki
waqt kya aagaya raza maula
aaj baghdad may...

kabhi dadi ko yaad karta tha
kabhi beti ko yaad karta tha
waqt e aakhir tha uske honton par
fatema fatema raza maula
aaj baghdad may...

qaid khane se pul talak isko
chand mazdoor leke aaye hai
aediyon ke nishan ghurbat ka
de rahe hai pata raza maula
aaj baghdad may...

tauq gardan ka paon ki bedi
ye takallum sadayein dete hai
inna lilaah padh ke baba ka
ab janaza utha raza maula
aaj baghdad may...

آج بغداد میں کوئی قیدی
ہوگیا ہے رہا رضا مولا
پل پہ تیرے غریب بابا کا
ہے جنازہ رکھا رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

ایک بی بی سرہانے بیٹھی ہے
کس نے جانے اسے خبر کی ہے
ہاتھ پہلو پہ اپنے رکھے ہوے
آی ہے فاطمہ رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

رات سے پل پہ لاشہ رکھا ہے
جو گزرتا ہے اس پہ ہنستا ہے
بے بسی پر تمہارے بابا کی
رو رہی ہے قضا رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

حال اچھے نہیں ہے میت کے
آجا اعجاز سے امامت کے
شہر بغداد سے مدینے کا
ہے بہت فاصلہ رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

اک منادی ندا یہ دیتا ہے
رافضیوں کا مولا مارا گیا
آج اولاد پر محمد کی
وقت کیا آگیا رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

کبھی دادی کو یاد کرتا تھا
کبھی بیٹی کو یاد کرتا تھا
وقتِ آخر تھا اس کے ہونٹوں پر
فاطمہ فاطمہ رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

قید خانے سے پل تلک اس کو
چند مزدور لے کے آے ہیں
ایڑیوں کے نشان غربت کا
دے رہے ہیں پتا رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔

طوق گردن کا پاؤں کی بیڑی
یہ تکلم صدایں دیتے ہیں
انا للہ پڑھکے بابا کا
اب جنازہ اٹھا رضا مولا
آج بغداد میں۔۔۔