NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ab aaye ho baba

Nohakhan: Izzat Lakhnavi
Shayar: Shahid Naqvi


wo karbala wo shaam e ghariban wo teeragi
wo zainab e hazeen wo hifazat qayaam ki
aaya wo ek sawaar khareeb e qayame shah
beti ali ki ghayz may suye faras badi
ulti naqab chehre se apne sawaar ne
payshe nigahe zainab e mazloom thay ali
har chand saabira thi bahot binte fatema
be saakhta zaban pa ye faryad aa gayi
zainab ne kaha baap ke qadmon se lipat kar
ab aaye ho baba
jab lut gaya pardes may amma ka bhara ghar
ab aaye ho baba

baba gar aana hi tha khaaliq ki riza se
us waqt na aaye
jab khaak pa dam tod raha tha mera akbar
ab aaye ho baba

kat kat ke giray nehr pa jab baazu e abbas
aur koi na tha paas
us waqt sada aap ko deta tha dilawar
ab aaye ho baba

jab farshe zameen baam e falak larza baja thay
us waqt kahan thay
jab baap ke chullu may tha khoone ali asghar
ab aaye ho baba

jab bhai ka sar kat'ta tha mai dekh rahi thi
hazrat ko sada di
sar khole hue roti thi mai qaime ke dar par
ab aaye ho baba

jab log bacha le gaye laashe shohda ke
haq apna jata ke
bas ek tan-e-shabbir tha pamaali ki zad par
ab aaye ho baba

jab bali sakina ke gohar cheene gaye thay
lagte thay tamache
hasrat se mujhe dekhti thi banu e muztar
ab aaye ho baba

jab shaam ke qazaaz hamay loot rahe thay
qaimon ko jale ke
aap aagaye hotay to na chinti meri chadar
ab aaye ho baba

kya aap ne firdaus se ye dekha na hoga
kya hashr bapa tha
jab pusht se bemaar ke khayncha gaya bistar
ab aaye ho baba

ek raat ke mehman hai phir qaid e salaasil
ab aane se haasil
bazaar may hum subho ko jayenge khule sar
ab aaye ho baba

shahid rukhe hyder pa bikhar jaate thay aansu
jab khol ke gaysu
chillati thi zainab mere baba meri chadar
ab aaye ho baba

وہ کربلا و شام غریباں وہ تیرگی
وہ زینب حزیں وہ حفاظت خیام کی
آیا وہ اک سوار قریب خیام شاہ
بیٹی علی کی غیض میں سوئے فرس بڑھی
الٹی نقاب چہرے سے اپنے سوار نے
پیش نگاہ زینب مظلوم تھے علی
ہر چند صا برہ تھی بہت بنت فاطمہ
بے ساختہ زبان پہ فریاد آگئی
زینب نے کہا باپ کے قدموں سے لپٹ کر
اب آئے ہو بابا
جب لٹ گیا پردیس میں اماں کا بھرا گھر
اب آئے ہو بابا

بابا اگر آنا ہی تھا خالق کی رضا سے
اس وقت نہ آئے
جب خاک پہ دم توڑ رہا تھا میرا اکبر
اب آئے ہو بابا

کٹ کٹ کے گرے نہر پہ جب بازوئے عباس
اور کوئی نہ تھا پاس
اس وقت صدا آپ کو دیتا تھا دلاور
اب آئے ہو بابا

جب فرش زمین بام فلک لرزہ بجا تھے
اس وقت کہاں تھے
جب باپ کے چلو میں تھا خون علی اصغر
اب آئے ہو بابا

جب بھائی کا سر کٹتا تھا میں دیکھ رہی تھی
حضرت کو صدا دی
سر کھولے ہوئی روتی تھی میں خیمے کے در پر
اب آئے ہو بابا

جب لوگ بچا لے گئے لاشے شہدائ کے
حق اپنا جتا کر
بس اک تن شبیر تھا پامالی کی زد پر
اب آئے ہو بابا

جب بالی سکینہ کے گوہر چھینے گئے تھے
لگتے تھے طمانچے
حسرت دے مجھے دیکھتی تھی بانوئے مضطر
اب آئے ہو بابا

جب شام کے کزاز ہمیں لوٹ رہے تھے
خیموں جلا کے
آپ آگےء ہوتے تو نہ چھنتی میری چادر
اب آئے ہو بابا

کیا آپ نے فردوس سے یہ دیکھا نہ ہو گا
اک حشر بپا تھا
جب پشت سے بیمار کی کھینچا گیا بستر
اب آئے ہو بابا

اک رات کا مہماں ہیں پھر قید و سلاسل
اب سخت ہے منزل
بازار میں ہم صبح کو جائیں گے کھلے سر
اب آئے ہو بابا

شاہد رخ حیدر پہ بکھر جاتے تھے آنسو
جب کھول کے گیسو
چلاتی تھی زینب میرے بابا میری چادر
اب آئے ہو بابا