NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baade sheh zainabe

Nohakhan: Others
Shayar: Anees


baade sheh zainabe dilgeer ne kya kya dekha
sumay aspo ke talay bhai ka laasha dekha

haq paraston ka wafadaron ka aur pyaron ka
sar ko naize pe jasad khaak pe bikhra dekha
baade sheh zainabe...

chaadare cheen ke kuffaro ne loota ghar ko
sar barehna shahe laulaak ka kunba dekha
baade sheh zainabe...

shimr ne cheene gohar moo pe tamache maare
khoon kaano se sakina ke tapakta dekha
baade sheh zainabe...

ek rasan may kiya paband bade choton ko
tauq o zanjeer may bemaar ko jakda dekha
baade sheh zainabe...

godh se maa'on ki daurane rahe kufa o shaam
jo bhi bacha gira naaqe se kuchalta dekha
baade sheh zainabe...

haye jis shehr may shehzadi kahi jaati thi
khud ko is koofe may be-makna o chaadar dekha
baade sheh zainabe...

qaid may margayi ghut ghut ke sakina aakhir
markhad ek chota sa zindan may banta dekha
baade sheh zainabe...

haye shabbir ne aur zainab o kubra ne anees
waqt ke saath zamane ko badalta dekha
baade sheh zainabe...

بعدِ شِہ زینبِ دلگیر نے کیا کیا دیکھا
سُمِ اسثوں کے تلے بھائی کا لاشہ دیکھا

حق پرستوں کا وفاداروں کا اور پیاروں کا
سر کو نیزہ پہ جسد خاک پہ بکھرا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

چادریں چھین کے کفاروں نے لُوٹا گھرکو
سر برہنہ شاہِ لولاک کا کنبہ کا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

شمر نے چھینے گوہر منہ پہ تماچے مارے
خون کانوں سے سکینہ کے ٹپکتا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

اک رسن میں کیا پابند بڑے چھوٹوں کو
طوق و زنجیر میں بیمار کو جکڑا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

گود سے ماؤں کی دورانے رہے کوفہ و شام
جو بھی بچہ گرا ناقے سے کچلتا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

ہائے جس شہر میں شہزادی کہی جاتی تھی
خود کو اس کوفے میں بے مکنہ و چادر دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

قید میں مر گئی گھُٹ گھُٹ کے سکینہ آخر
مرقد ایک چھوٹا سا زندان میں بنتا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔

ہائے شبیر نے اور زینب و کبریٰ نے انیس
وقت کے ساتھ زمانے کو بدلتا دیکھا
بعدِ شِہ زینبِ۔۔۔