NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ek yateem aisi bhi

Nohakhan: Raza Abbas Zaidi
Shayar: Zeeshan Abidi


raah may naaqe se jab gir gayi choti zahra
godh may ek zaeefa ne usay thaam liya
sar pe jab haath rakha roke sakina ne kaha
jabse baba se mai bichdi hoo bahot maara gaya
mere gaalon pe tamachon ke nishan hai bibi
tumne dekhi hai mere jaisi yateema koi

baat ye jab suni wo bhi rone lagi
phir zaeefa sakina se kehne lagi

tumse pehle ek yateema aisi bhi thi

haa tumhare watan may hi rehti thi wo
badshah e madina ki beti thi wo
baap ke baad itne masayab pade
apne ghar may sahare se chalti thi wo
gham uthaati rahi kham kamar hogayi
naujawani may hi jo zaeefa hui
tumse pehle ek yateema...

zaalimo ne yun baba ka pursa diya
jalta darwaza uspe giraya gaya
dar ke neeche thi wo dar hata na saki
haath bhi jal gaye pehlu zakhmi hua
log chal kar yahan se gaye jab wahan
paon rakh rakh ke todi gayi phasliyan
tumse pehle ek yateema...

wo zaeefa kahani sunati rahi
aur masoom aansu bahati rahi

gaal neele hai jaise tumhare abhi
uske gaalon ki rangat bhi aisi hi thi
saamne usko beton ke maara gaya
waqt ye na kisi maa pe aaye kabhi
shaahzadi suno kitni bebas thi wo
ghar may bachon se chehra chupati thi jo
tumse pehle ek yateema...

jis tarha tere kaano se hai khoon rawan
kaan uske bhi zakhmi thay ay meri jaan
itni shiddat se zaalim ne maara usay
toot kar khaak pe gir gayi baliyan
beti bin baap ki dard seh na saki
haath kano pe rakh kar wo roti rahi
tumse pehle ek yateema...

wo zaeefa kahani sunati rahi
aur masoom aansu bahati rahi

pani uth uth ke jisko pilaati thi wo
loriyan de ke jisko sulaati thi wo
haath chadar may us se chupane lagi
haath phailaake jisko bulaati thi wo
kaise kehti wo maa mere dil meri jaan
taziyano se zakhmi sab ungliyan
tumse pehle ek yateema...

uska marna bhi sab se chupaya gaya
chauda logon may ghar se janaza utha
uski chalees qabrein banayi gayi
bas ye sunte hi bachi ne rokar kaha
ay zaeefa suno meri dadi thi wo
mujhko jaldi batao ke tum kaun ho
tumse pehle ek yateema...

haath pehlu se apne uthaate huwe
zakmi chehre se parda hataate huwe
ay raza aur zeeshan rone lagi
ye sakina ko zehra bataate huwe
mera virsa ho tum mera chehra ho tum
ab samajh aaya kyun choti zehra ho tum

راہ میں ناقے سے جب گرگئی چھوٹی زہرا
گود میں ایک ضعیفہ نے اُسے تھام لیا
سر پہ جب ہاتھ رکھا روکے سکینہ نے کہا
جب سے بابا سے میں بچھڑی ہوں بہت ماراگیا
میرے گالوں پہ طمانچوں کے نشاں ہیں بی بی
تم نے دیکھی ہے مرے جیسی یتیمہ کوئی

بات جب یہ سنی وہ بھی رونے لگی
پھر ضعیفہ سکینہ سے کہنے لگی

تم سے پہلے اک یتیمہ ایسی بھی تھی

ہاں تمہارے وطن میں ہی رہتی تھی وہ
بادشاہِ مدینہ کی بیٹی تھی وہ
باپ کے بعد اتنے مصائب پڑے
اپنے گھر میں سہارے سے چلتی تھی وہ
غم اُٹھاتی رہی خم کمر ہوگئی
نوجوانی میں ہی جو ضعیفہ ہوئی
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

ظالموں نے یوں بابا کا پرسہ دیا
جلتا دروازہ اُس پر گرایا گیا
در کے نیچے تھی وہ در ہٹا نا سکی
ہاتھ بھی جل گئے پہلو زخمی ہوا
لوگ چل کر یہاں سے گئے جب وہاں
پاؤں رکھ رکھ کے توڑی گئی پسلیاں
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

وہ ضعیفہ کہانی سناتی رہی
اور معصوم آنسو بہاتی رہی

گال نیلے ہیں جیسے تمہارے ابھی
اُسکے گالوں کی رنگت بھی ایسی ہی تھی
سامنے اُسکو بیٹوں کے مارا گیا
وقت یہ نا کسی ماں پہ آئے کبھی
شاہ زادی سنو کتنی بے بس تھی وہ
گھر میں بچوں سے چہرا چھپاتی تھی جو
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

جس طرح تیرے کانوں سے ہے خوں رواں
کان اُسکے بھی زخمی تھے اے میری جاں
اتنی شدت سے ظالم نے مارا اُسے
ٹوٹ کر خاک پہ گر گئیں بالیاں
بیٹی بن باپ کی درد سہہ نا سکی
ہاتھ کانوں پہ رکھ کر وہ روتی رہی
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

وہ ضعیفہ کہانی سناتی رہی
اور معصوم آنسو بہاتی رہی

پانی اُٹھ اُٹھ کے جسکو پلاتی تھی وہ
لوریا ں دے کے جسکو سلاتی تھی وہ
ہاتھ چادر میں اُس سے چھپانے لگی
ہاتھ پھیلاکے جسکو بلاتی تھی وہ
کیسےکہتی وہ ماں میرےدل میری جاں
تازیانوں سے زخمی ہیں سب اُنگلیاں
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

اُسکا مرنا بھی سب سے چھپایا گیا
چودہ لوگوں میں گھر سے جنازہ اُٹھا
اُسکی چالیس قبریں بنائی گئیں
بس یہ سنتے ہی بچی نے روکر کہا
اے ضعیفہ سنو میری دادی تھیں وہ
مجھکو جلدی بتاؤ کہ تم کون ہو
تم سے پہلے اک یتیمہ۔۔۔

ہاتھ پہلو سے اپنے اُٹھاتے ہوئے
زخمی چہرے سے پردہ ہٹاتے ہوئے
اے رضا اور ذیشان رونے لگیں
یہ سکینہ کو زہرا بتاتے ہوئے
میرا ورثہ ہو تم میرا چہرا ہو تم
اب سمجھ آیا کیوں چھوٹی زہرا ہو تم