NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akeli zahra

Nohakhan: Shahid Baltistani
Shayar: Mohsin Jaffri


kalma goyon may hui haye akeli zahra
sar e darbar gayi baba jhutlayi gayi
aap ki beti zahra

kar ke tehreer ke tukde mujhe lautaya gaya
mere masoom gawahon ko bhi jhutlaya gaya
kehkahe sehti rahi aur sanad chunti rahi
aap ki sachi zahra
kalma goyon may hui...

jis gali may mujhe zaalim ne tamacha maara
jeete jee mera hassan phir na wahan se guzra
wo na bhoolega kabhi us se dekhi na gayi
khaak pe girti zahra
kalma goyon may hui...

zakhm pehlu ka to bachon se chupaya baba
par ye sadma mujhe turbat may bhi tadpayega
jab tamache khaaye dekha bachon ne mere
rok na paayi zahra
kalma goyon may hui...

aap ki zahra thi jalte huye dar ke neeche
aur haste huwe us par se musalman guzre
thokre khaati rahi ya ali kehti rahi
baba tumhari zahra
kalma goyon may hui...

phasliyan toot ke uljhi hai kuch aise baba
saans leti hoo to dukhta hai kaleja mera
hai shikasta baazu kar nahi sakti ruku
zakhmi hai itni zahra
kalma goyon may hui...

mujhse kehne lagi zainab ay zaeefa bibi
ye hai kaunain ki malka ka musalla bibi
aisi haalat thi meri wo na pehchaan saki
saamne baithi zahra
kalma goyon may hui...

mekh jalte hue darwaze ki jab surkh hui
mere pehlu se wo mohsin ke badan may utri
haye dam tod gaya wo mujhe chod gaya
zinda hai phir bhi zahra
kalma goyon may hui...

qabre zahra ki khamoshi ye buka karti hai
mera mohsin hai jo parde may mera mehdi hai
ab fidak ki khaatir apne haq ki khaatir
kuch na kahegi zahra
kalma goyon may hui...

کلمہ گویوں میں ہوی ہاے اکیلی زہرا
سر دربار گیء بابا جھٹلای گیء
آپ کی بیٹی زہرا

کر کے تحریر کے ٹکڑے مجھے لوٹایا گیا
میرے معصوم گواہوں کو بھی جھٹلایا گیا
قہقہے سہتی رہی اور سند چنتی رہی
آپ کی سچی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

جس گلی میں مجھے ظالم نے طمانچہ مارا
جیتے جی میرے حسن پھر نہ وہاں سے گزرا
وہ نہ بھولے گا کبھی اس سے دیکھی نہ گیء
خاک پہ گرتی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

زخم پہلو کا تو بچوں سے چھپایا بابا
پر یہ صدمہ مجھے تربت میں بھی تڑپاے گا
جب طمانچے کھاے دیکھا بچوں نے میرے
روک نہ پای زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

آپ کی زہرا تھی جلتی ہوے در کے نیچے
اور ہنستے ہوے اس پر سے مسلمان گزرے
ٹھوکریں کھاتی رہی یا علی کہتی رہی
بابا تمہاری زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

پسلیاں ٹوٹ کے الجھی ہے کچھ ایسے بابا
سانس لیتی ہوں تو دکھتا ہے کلیجہ میرا
ہے شکستہ بازو کر نہیں سکتی رکوع
زخمی ہے اتنی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

مجھ سے کہنے لگی زینب اے ضعیفہ بی بی
یہ ہے کونین کی ملکہ کا مصلہ بی بی
ایسی حالت تھی میری وہ نہ پہچان سکی
سامنے بیٹھی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

میخ جلتے ہوے دروازے کی جب سرخ ہوی
میرے پہلو سے وہ محسن کے بدن میں اتری
ہاے دم توڑ گیا وہ مجھے چھوڑ گیا
زندہ ہے پھر بھی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔

قبر زہرا کی خموشی یہ بکا کرتی ہے
میرا محسن ہے جو پردے میں میرا مہدی ہے
اب فدک کی خاطر اپنے حق کی خاطر
کچھ نہ کہے گی زہرا
کلمہ گویوں میں ہوی۔۔۔