NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akeli hai zehra

Nohakhan: Zainab Batool
Shayar: Akhtar Zaidi


kahan jaaye aakhir bayaban har soo
shikasta hai pehlu akeli hai zehra
rone pe pehra masayab ka sehra
akeli hai zehra

dar e fatema ko jalaya hai tumne
kiya waada apna bhulaya hai tumne
tamache na maaro musalmano jao
ali ko bulao akeli hai zehra
rone pe pehra...

bayan kis se jaa kar karun dard apna
hai ghairon ki dunya nahi koi apna
koi jaake baba se jakaar ye kehdo
ke le jao aakar akeli hai zehra
rone pe pehra...

ay lakhte jigar ay hassan ibne hyder
ye nana ke pehlu me sone na de gar
tum aa jaana pehlu may so jaana maa ke
baqi may yahan par akeli hai zehra
rone pe pehra...

shahe karbala ne kaha roke maa se
ye mazloom bete ne mazloom maa se
akela hoo mai bhi akeli hai zainab
akele hai baba akeli hai zehra
rone pe pehra...

sare marg akhtar hai zahra ka nauha
kab aaoge mehdi kab aaoge beta
khuda ke liye ab ye parda hatao
chale aao aao akeli hai zehra
rone pe pehra...

کہاں جائے آخر بیابان ہر سو
شکستہ ہے پہلو اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا مصائب کا صحرا
اکیلی ہے زہرا

در فاطمہ کو جلایا ہے تم نے
کیا وعدہ اپنا نبھایا ہے تم نے
طمانچے نہ مارو مسلمانوں جاؤ
علی کو بلاؤ اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا۔۔۔

بیاں کس سے جاکر کروں درد اپنا
ہے غیروں کی دنیا نہیں کوئی اپنا
کوئی جاکے بابا سے جاکر یہ کہہ دو
کہ لے جاؤ آکر اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا۔۔۔

اے لختِ جگر اے حسن ابنِ حیدر
یہ نانا کہ پہلو میں سونے نہ دے گر
تم آجانا پہلو میں سو جانا ماں کے
بقیہ میں یہاں پر اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا۔۔۔

شہ کربلا نے کہا روکے ماں سے
یہ مظلوم بیٹے نے مظلوم ماں سے
اکیلا ہوں میں بھی اکیلی ہے زینب
اکیلے ہیں بابا اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا۔۔۔

سر مرگ اختر ہے زہرا کا نوحہ
کب آؤ گے مہدی کب آؤ گے بیٹا
خدا کے لئے اب یہ پردہ ہٹاؤ
چلے آؤ آؤ اکیلی ہے زہرا
رونے پہ پہرا۔۔۔