NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aap ke baad na soyi

Nohakhan: Irfan Haider
Shayar: Zeeshan Abidi


ek roz madine waalon ne
hyder se kaha zehra se kahe
wo raat may mehlan ro le ya
baba ke liye din may role
ye baat ali ne batlaayi
jab fatema zehra ko aa kar
boli zehra mai rolungi
ab ghar se door kahin jaa kar
ye sunke madine se baahar
ek baitul huzn banaya gaya
jahan baith ke zehra roti thi
aur ro ro ke ye kehti thi

haye baba aap ke baad na soyi zehra
bas roti rahi haye wavaila wavaila

jis ghadi jalta hua mujhpe wo darwaza gira
phasliyan toot gayi pehlu shakista bhi hua
tumhari ye beti sada de rahi thi
haye maara gaya mohsin
haye baba aap ke baad na...

baba tum jab se gaye hogayi tanha zehra
aap ki yaad may jab ghar may bicha farsh e aza
isi gham may royi yateemi may koi
dene nahi aaya hausla
haye baba aap ke baad na...

kaash wo waqt kabhi mujhpe na aata baba
maine hyder ka gala rassi may dekha baba
gayi jab bachane lagay taaziyane
aur haath mera zakhmi hua
haye baba aap ke baad na...

baba ek maa ka liye waqt bahot mushkil tha
ek zaalim ne mere rukh pe tamacha maara
chupaati thi chehra hassan dekhta tha
jab surkh huwa chehra
haye baba aap ke baad na...

mere aane pe jahan aap bhi uth jaate thay
wohi darbar tha aur saamne sab baithe rahe
akeli khadi thi fidak maangti thi
afsos mujhe haq na mila
haye baba aap ke baad na...

sirf athara baras may ye mera aalam hai
dekho baalon may safaydi hai kamar bhi kham hai
zaeefa hai ab to mera haal dekho
mai thaam ke chalti hoo asa
haye baba aap ke baad na...

ro ke zeeshan yehi kehta hai irfan e aza
cheen kar saaya layeen ne wo shajar kaat diya
jahan baith'ti thi bas ab doop may bhi
honton pe yehi tha marsiya
haye baba aap ke baad na...

اک روز مدینے والوں نے
حیدر سے کہا زہرا سے کہے
وہ رات میں مہلن رو لے یا
بابا کے لئے دن میں رولے
یہ بات علی نے بتلای
جب فاطمہ زہرا کو آ کر
بولی زہرا میں رولوں گی
اب گھر سے دور کہیں جا کر
یہ سن کے مدینے سے باہر
اک بیت الحزن بنایا گیا
جہاں بیٹھ کے زہرا روتی تھی
اور رو رو کے یہ کہتی تھی

ہاے بابا آپ کے بعد نہ سوی زہرا
بس روتی رہی ہاے واویلا واویلا

جس گھڑی جلتا ہوا مجھ پہ وہ دروازہ گرا
پسلیاں ٹوٹ گیء پہلو شکستہ بھی ہوا
تمہاری یہ بیٹی صدا دے رہی تھی
ہاے مارا گیا محسن
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

بابا تم جب سے گےء ہوگیء تنہا زہرا
آپکی یاد میں جب گھر میں بچھا فرش عزا
اسی غم میں روی یتیمی میں کوی
دینے نہیں آیا حوصلہ
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

کاش وہ وقت کبھی مجھ پہ نہ آتا بابا
میں نے حیدر کا گلا رسی میں دیکھا بابا
گیء جب بچانے لگے تازیانے
اور ہاتھ میرا زخمی ہوا
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

بابا اک ماں کا لیے وقت بہت مشکل تھا
ایک ظالم نے میرے رخ پہ طمانچہ مارا
چھپاتی تھی چہرہ حسن دیکھتا تھا
جب سرخ ہوا چہرا
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

میرے آنے پہ جہاں آپ بھی اٹھ جاتے تھے
وہی دربار تھا اور سامنے سب بیٹھے رہے
اکیلی کھڑی تھی فدک مانگتی تھی
افسوس مجھے حق نہ ملا
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

صرف اٹھارہ برس میں یہ میرا عالم ہے
دیکھو بالوں میں سفیدی ہے کمر بھی خم ہے
ضعیفی ہے اب تو میرا حال دیکھو
میں تھام کے چلتی ہوں عصا
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔

رو کے ذیشان یہی کہتا ہے عرفان عزا
چھین کر سایہ لعیں نے وہ شجر کاٹ دیا
جہاں بیٹھتی تھی بس اب دھوپ میں بھی
ہونٹوں پہ یہی تھا مرثیہ
ہاے بابا آپ کے بعد نہ۔۔۔