NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bazaar aa raha hai

Nohakhan: Kazmi Brothers
Shayar: Haider Awan


ye kaun khoon rota bazaar aa raha hai
lab pe sawaal e chadar aankhon may karbala hai

mahol hai sharabi uryan aayatein hai
ghairat ke na khuda par ghurbat ki imtehan hai
ye kaun khoon rota…

abid haya ka kaaba kaise na khoon roye
namoos us jari ki balwe may berida hai
ye kaun khoon rota…

ghairat se khoon may tar har aankh hai sina par
darbar waqt e payshi nazdeek aa chuka hai
ye kaun khoon rota…

hilne lagi zameen aur bazaar thar tharaya
zainab ka patharon se jab zakhmi sar hua hai
ye kaun khoon rota…

balon may aa chuki hai masooma ke safedi
shimr e layeen ne uspe itna sitam kiya hai
ye kaun khoon rota…

haider karenge matam is baat ka hashr tak
sajjad ki jawani bazaar kha gaya hai
ye kaun khoon rota…

یہ کون خون روتا بازار آرہا ہے
لب پے سوالِ چادر آنکھوں میں کربلاء ہے

ماحول ہے شرابی عُریان آیتیں ہیں
غیرت کے ناخدا پر غربت کی انتہا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔

عابد حیاء کا کعبہ کیسے نہ خون روئے
ناموس اُس جری کی بلوے میں بے ردا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔

غیرت سے خون میں تر ہر آنکھ ہے سناں پر
دربار وقت پیشی نزدیک آ چکا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔

ہلنے لگی زمیں اور بازار تھرتھرایا
زینب کا پتھروں سے جب زخمی سر ہوا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔

بالوں میں آچُکی ہے معصومہ کے سفیدی
شمۙرِ لعیں نے اُس پر اتنا ستم کیا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔

حیدر کریں گے ماتم اِس بات کا حشر تک
سجّاد کی جوانی بازار کھا گیا ہے
یہ کون خون روتا۔۔۔