NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ghar se jab behre safar

Marsiya-Khwan: Momin Ali Qaisar


ghar se jab behre safar sayyede aalam nikle
sar jhukaye huwe ba deedae purnum nikle
khaish o farzand kamar baand ke baaham nikle
roke farmaya ke is shehr se ab hum nikle
raat se girya e zehra ki sada aati hai
dekhe kismat hame kis dasht may le jaati hai

rukh kiya sheh ne suye qabre shehenshah e anaam
behre tasleem jhuke muttasile baabe salaam
izn pad kar jo gaye qabr ke nazdeek imam
arz ki aaya hai aaj aakhri ruqsat ko ghulam
ye makaan hum se ab ay shaahe zaman chut'ta hai
aaj hazrat ke nawase se watan chut'ta hai

chain se sab hai gharon may mujhe milta nahi chain
saqt aafat may hai ab aap ka ye noorul ain
tukde dil hota hai jab roke haram karte hai bain
nanhe bachon ko bhala leke kidhar jaaye hussain
shehr may chain na jangal may amaan milti hai
dekhiye qabr musafir ko kahan milti hai

ab mere sar ke liye tez huwe hai khanjar
ahle keen shar pa kamar baandhe hai ya qair e bashar
aap ne di thi isi roz ki amma ko qabar
waaleda royi thi do roz talak peet ke sar
is nawase ko magar bhool na jaana hazrat
zibha ke waqt madad karne ko aana hazrat

ye wo din hai ke parinde bhi nahi chodte ghar
mujhko dar pesh hai in rozon may aafat ka safar
hai kahin qatl ka saaman kahin lut jaane ka darr
saat hai bachon ka ay baadshah e jinn o bashar
tang jeene se hoo paas apne bulalo nana
apni turbat may nawase ko chupalo nana

ye bayan karke jo taveez se lipte sarwar
yun hili qabr ke tharrayi zareeh e anwar
aayi turbat se ye awaaz e habeeb e daawar
teri gurbat ke mai sadqe mere mazloom pisar
koyi samjha na meri godh ka paala tujhko
haye aada ne madine se nikaala tujhko

ay mere gaysuon waale mere saabir shabbir
mere bekas mere mazloom musafir shabbir
na raha koi tera yawar o nasir shabbir
haye ay gor e ghariban ke mujaver shabbir
tu jahan jayega pyare wahin chalta hoo mai
khaak udaata hua turbat se nikalta hoo mai

kayi din se teri maadar ko nahi qabr may chain
aayi thi shab ko mera paas ye karti hui bain
ghar mera lut'ta hai faryad rasool us saqlain
subha ko apna watan chod ke jaata hai hussain
kehne aayi hoon ke moo qabr se modungi mai
apne bache ko akela to na chodungi mai

sunke ye sheh ne kiya aakhri ruksat ka salaam
nikle rote huve jab rauza e anwar se imam
sheh se us dam ye kiya ro ro ke zainab ne kalaam
qabr par maa ki mujhe le chalo ya shaah e anaam
log hamraah hai mehmil may mai kyun kar ro'un
maa ki turbat se phir ek baat lipat kar ro'un

maa ki turbat pe gaye shaah ba chashm e khoon baar
utri mehmil se basad aah o fughan zainab e zaar
daud kar qabr se lipte jo imam e abraar
haat zehra ke lahad se nikal aaye ek baar
aayi awaaz na ro dil ko qalaq hota hai
qabr hilti hai kaleja mera shaq hota hai

haan bulao mera abbas e dilawar hai kidhar
wo fida hai mere bache pa mai sadqe us par
shikam e ghair se hai par wo mera hai pisar
ye sada sunke baradar ko pukare sarwar
abhi rehwaar ko aage na badao bhai
yaad farmati hai amma idhar aao bhai

aake abbas ne sar rakh diya paeene mazaar
aayi zehra ki nida mai teri gurbat ke nisar
apne pyaron ke barabar may tujhe karti hoo pyar
dhyan bhai ki hifazat ka rahe ay dildaar
koi gurbat may usay maar na daale beta
mera shabbir hai ab tere hawale beta

گھر سے جب بہر سفر سید عالم نکلے
سر جھکائے ہوے با دیدۂ پرنم نکلے
خویش و فرزند و کمر باندھ کے باہم نکلے
روکے فرمایا کہ اس شہر سے اب ہم نکلے
رات سے گریہء زہرا کی صدا آتی ہے
دیکھیں قسمت ہمیں کس دشت میں لے جاتی ہے

رخ کیا شہ نے سوے قبر شہنشاہِ انام
بہر تسلیم جھکے متصل باب سلام
اذن پڑھکر جو گےء قبر کے نزدیک امام
عرض کی آیا ہے آج آخری رخصت کو غلام
یہ مکاں ہم سے اب اے شاہ زمن چھٹتا ہے
آج حضرت کے نواسے سے وطن چھٹتا ہے

چین سے سب ہیں گھروں میں مجھے ملتا نہیں چین
سخت آفت میں ہے اب آپکا یہ نورالعین
ٹکڑے دل ہوتا ہے جب روکے حرم کرتے ہیں بین
ننھے بچوں کو بھلا لے کے کدھر جاے حسین
شہر میں چین نہ جنگل عماں ملتی ہے
دیکھیےء قبر مسافر کو کہاں ملتی ہے

اب میرے سر کے لئے تیز ہوے ہیں خنجر
اہلِ کیں شر پہ کمر باندھے ہیں یا خیر بشر
آپ نے دی تھی اسی روز کی اماں کو خبر
والدہ روی تھی دو روز تلک پیٹ کے سر
اس نواسے کو مگر بھول نہ جانا حضرت
ذبح کے وقت مدد کرنے کو آنا حضرت

یہ وہ دن ہیں کہ پرندے بھی نہیں چھوڑتے گھر
مجھکو درپیش ہے ان روزوں میں آفت کا سفر
ہے کہیں قتل کا ساماں کہیں لٹ جانے کا ڈر
ساتھ ہے بچوں کا اے بادشاہ جن و بشر
تنگ جینے سے ہوں پاس اپنے بلالو نانا
اپنی تربت میں نواسے کو چھپالو نانا

یہ بیاں کرکے جو تعویذ سے لپٹے سرور
یوں ہلی قبر کہ تھرای ضریح انور
آی تربت سے یہ آواز حبیب داور
تیری غربت کے میں صدقے میرے مظلوم پسر
کوئی سمجھا نہ میری گود کا پالا تجھکو
ہاے اعدا نے مدینے سے نکالا تجھکو

اے میرے گیسوؤں والے میرے صابر شبیر
میرے بے کس میرے مظلوم مسافر شبیر
نہ رہا کوئی تیرا یاور و ناصر شبیر
ہاے گور غریباں کے مجاور شبیر
تو جہاں جاے گا پیارے میں وہی چلتا ہوں میں
خاک اڑاتا ہوا تربت سے نکلتا ہوں میں

کیء دن سے میری مادر کو نہیں قبر میں چین
آی تھی شب کو میرے پاس یہ کرتی ہوی بین
گھر میرا لٹتا ہے فریاد رسول الثقلین
صبح کو اپنا وطن چھوڑ کے جاتا ہے حسین
کہنے آی ہوں کہ منہ قبر سے موڑونگی میں
اپنے بچے کو اکیلا تو نہ چھوڑوں گی میں

سن کے یہ شہ نے کیا آخری رخصت کا سلام
نکلے روتے ہوئے جب روضہء انور سے امام
شہ سے اس دم یہ کیا رو رو کے زینب نے کلام
قبر پر ماں کی مجھے لے چلو یا شاہ انام
لوگ ہمراہ ہے محمل میں میں کیونکر روؤں
ماں کی تربت سے پھر اک بار لپٹ کر روؤں

ماں کی تربت پہ گےء شاہ بہ چشمِ خوں بار
اتری محمل سے بصد آہ و فغاں زینب زار
دوڑ کر قبر سے لپٹے جو امام ابرار
ہاتھ زہرا کے لحد سے نکل آئے اک بار
آی آواز نہ رو دل کو قلق ہوتا ہے
قبر ہلتی ہے کلیجہ میرا شق ہوتا ہے

ہاں بلاؤ میرا عباس دلاور ہے کدھر
وہ فدا ہے میرے بچے پہ میں صدقے اس پر
شکم غیر سے ہے پر وہ میرا ہے پسر
یہ صدا سن کے برادر کو پکارے سرور
ابھی رہوار نہ آگے نہ بڑھاؤ بھای
یاد فرماتی ہے اماں ادھر آؤ بھای

آکے عباس نے سر رکھ دیا پایینے مزار
آی زہرا کی ندا میں تیری غربت کے نثار
اپنے بچوں کے برابر میں تجھے کرتی ہوں پیار
دھیان بھای کی حفاظت کا رہے اے دلدار
کوئی غربت میں اسے مار نہ ڈالے بیٹا
میرا شبیر ہے اب تیرے حوالے بیٹا