ہر مجلس شببر میں آتی ہے ماں ، شبّیر کی
کہتی ہے کیا ، اے مومنوں تم سے یہ ماں روتی ہوئی
زخمی ہے میرا لاڈلا، زخمی ہے میرا لاڈلا
مرہم مجھے دے دو کوئی ، مرہم تو ہے اشک عزا
رومال میں لے جاؤنگی
ان آنسوو ں نے بھر دیے سب زخم تو دلگیر کے
دو گھاؤ ایسے ہیں مگر   بھرتے نہیں شبّیر کے
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

ماتم کرو ماتم کرو گھر لوٹ گیا شبّیر کا
ماں آگی شبّیر کی ماتم کرو شبّیر کا
خنجر تلے نیزے پہ بھی کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

تیروں پہ تھا لاشہ تیرا روتی رہی کرب و بلا
خیمے کا جب پردہ اٹھا بولی بہن بھیا میرا
لاشہ تڑپ کر رہ گیا کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

صغرا ادھر روتی رہی مولا ادھر روتے رہے
ماں منتظر بیمار تھی یاں قتل سب ہوتے رہے
صحرا میں گھر لٹتا رہا کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

لپٹی سم اسپاں سے تھی وہ لاڈلی بیٹی تیری
معلوم تھا مولا تجھے اب نہ ملے گی یہ کبھی
پھر بھی سوے مقتل گئے کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

مارا گیا غازی تیرا پھر بھی کہا شکر خدا
قاسم گیا اصغر گیا پھر بھی کہا شکر خدا
ہر لاش پر آتے رہے کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

دربار میں بازار میں زندان میں ہر آن میں
کیسے ستم سہتی رہی بیٹی تیری بہنا تیری
دیکھا کیے نیزے سہے سب کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

نیزے پہ بھی سر ہے تیرا پھر بھی تیری کیا شان ہے
یہ سر ہے اے مولا تیرا یا بولتا قرآن ہے
تن سے جدا سر ہوگیا کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

ریحان اور سرور کرو مجلس بپا شبّیر کی
اکبر کا غم زینب کا غم معراج ہے تحریر کی
مولا عزا کے فرش پر کرتے رہے شکر خدا
نہ بھولے نہ بھولے شبّیر نہیں بھولے
اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا


har majlise shabbir may aati hai maa shabbir ki
kehti hai kya ay momino tumse ye maa roti hui
zakhmi hai mera laadla marham mujhe de do koi
marham to hai ashk e aza rumaal may le jaungi
in aansuon ne bhar diye sab zakhm to dilgeer ke
do gaho aise hai magar bharte nahi shabbir ke
na bhoole na bhoole shabbir nahi bhoole
ek chadar zainab ki ek seena akbar ka

matam karo matam karo ghar lutgaya shabbir ka
maa aagayi shabbir ki matam karo shabbir ka
khanjar talay naize pe bhi karte rahe shukr e khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

teeron pe tha laasha tera roti rahi karbobla
qaime ka jab parda utha boli behan bhaiya mera
laasha tadap ke reh gaya karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

sughra udhar roti rahi maula idhar rote rahe
wan muntazir bemaar thi yan qatl sab hote rahe
sehra may ghar lut-ta raha karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

lipti sumay aspa se thi wo laadli beti teri
maloom tha maula tujhe ab na milegi ye kabhi
phir bhi suye maqtal gaye karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

maara gaya ghazi tera phir bhi kaha shukre khuda
qasim gaya asghar gaya phir bhi kaha shukre khuda
har laash par aate rahe karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

darbar may bazaar may zindaan may har aan may
kaise sitam sehti rahi beti teri behna teri
dekha kiye naize se sab karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

naize pe bhi sar hai tera phir bhi teri kya shaan hai
ye sar hai ay maula tera ya bolta quran hai
tan se juda sar hogaya karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...

rehan aur sarwar karo majlis bapa shabbir ki
akbar ka gham zainab ka gham meraaj hai tehreer ki
maula aza ke farsh par karte rahe shukre khuda
na bhoole na...
ek chadar zainab...
Noha - Na Bhoole Na Bhoole
Shayar: Rehan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online