ہوں شرمندہ جنابِ سیدہ سے
میں زندہ آ گیا ہوں کربلا سے

وہ مقتل غم جہاں محوِ فُغاں تھا
وہی مقتل تھا اور وقتِ اذاں تھا
کلیجہ کاٹتی تھی یادِ اکبر
اذانِ فجر تھی اور میں وہاں تھا
پھٹتا پھر بھی نہ کیوں دل غم سے میرا
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

وہ مقتل جس کے سارے غم کھڑے تھے
جہان بے سر سبھی لاشے پرے تھے
مجھے یاد آگیا وہ غم کا منظر
کے شِہ مقتل میں جب تنہا کھڑے تھے
پھٹا پھر بھی نہ ۔۔۔۔۔
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

مقامِ حضرتِ اکبر کو دیکھا
مقامِ قاسم و اصغر کو دیکھا
جہاں بازو کٹے تھے باوفا کے
لبِ دریا اُسی منظر کو دیکھا
پھٹا پھر بھی نہ ۔۔۔۔۔
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

سرِ جان غم کا اک نیزہ گڑا تھا
میرے مرنے کو وہ لمحہ بڑا تھا
جہاں تھے آخری سجدے میں سرور
وہاں میں عصرِ عاشورہ کھڑا تھا
پھٹا پھر بھی نہ ۔۔۔۔۔
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

سِناں پر جہاں تھا شبیر کا سر
جہاں تھے بال بکھرائے پیعمبر
میں ماتم کر رہا تھا اُس جگہ پر
جہاں پر غش میں تھے سجادِ مضطر
پھٹا پھر بھی نہ ۔۔۔۔۔
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

وہ منظر شامِ غم کے یاد آئے
لعینوں نے تھے جب خیمے جلائے
جہاں چادر چھِنی گوہر چھِنے تھے
برہنہ سر جہاں زینب کو لائے
پھٹا پھر بھی نہ ۔۔۔۔۔
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔
ہوں شرمندہ ۔۔۔۔۔

نظر میری ہر اک غم پر جمی تھی
میری آنکھوں میں اشکوں کی نمی تھی
اچانک یہ خیال آیا تھا دل میں
کے مجھ میں کچھ مودت کی کمی تھی
_______________________________

یہی اک سوچ جب دل میں سمائی
صدا اک یک بیک کانوں میں آئی
بہت ہے یہ مودت کی کمائی
ہو راضی تجھ سے بس زہرا کی جائی
_______________________________

ہے صدقہ کربلاکا زندگانی
رہے قائم صدا تیری جوانی
نہ رُکنے پائے اشکوں کی روانی
صدا کرتا رہے تُو نوحہ خوانی
تجھے ہر دم ہے بس یہ غم منانا
یہاں پھر لوٹ کر ہے تجھ کو آنا
ابھی دینا ہے پُرسہ سیدہ کو
تجھے پھر ہیں یہاں نوحے سُنانا

میں یہ حسنین سمجھا اس صدا سے
عطا ہے نور یہ شاہِ ھُدیٰ سے
کرم ہے یہ عطائے سیدہ سے
میں زندہ آگیا ۔۔۔۔۔


hoo sharminda janab e sayyeda se
mai zinda aa gaya hoo karbala se

wo maqtal gham jahan mehve fughan tha
wohi maqtal tha aur waqt e azan tha
kaleja kaat-ti thi yaad e akbar
azan e fajr thi aur mai wahan tha
phata phir bhi na kyun dil gham se mera
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

wo maqtal jiske saare gham kaday thay
jahan be-sar sabhi laashe paday thay
mujhe yaad aagaya wo gham ka manzar
ke sheh maqtal may jab tanha khaday thay
phata phir bhi na....
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

maqame hazrate akbar ko dekha
maqame qasim o asghar ko dekha
jahan baazu katay thay ba-wafa ke
labe darya usi manzar ko dekha
phata phir bhi na....
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

sare jaan gham ka ek naiza gada tha
mere marne ko wo lamha bada tha
jahan thay aakhri sajde may sarwar
wahan mai asre ashoora khada tha
phata phir bhi na....
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

sina par jahan tha shabbir ka sar
jahan thay baal bikhraye payambar
mai matam kar raha tha us jagah par
jahan par ghash may thay sajjad e muztar
phata phir bhi na....
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

wo manzar sham-e-gham ke yaad aaye
layeeno ne thay jab qaime jalaye
jahan chadar chini gowhar chinay thay
ba-rehna sar jahan zainab ko laaye
phata phir bhi na....
mai zinda aa gaya....
hoo sharminda....

nazar meri har ek gham par jami thi
meri aankhon may ashkon ki nami thi
achanak ye khayal aaya tha dil may
ke mujhme kuch mawaddat ki kami thi
_______________________________

yehi ek soch jab dil may samayi
sada ek yakbayak kano may aayi
bahot hai ye mawaddat ki kamayi
ho raazi tujhse bas zehra ki jaayi
_______________________________

hai sadqa karbala ka zindagani
rahe qayam sada teri jawani
na rukne paaye ashkon ki rawani
sada karta rahe tu nohaqani
tujhe har dam hai bas ye gham manana
yahan phir laut kar hai tujhko aana
abhi dena hai pursa sayyeda ko
tujhe phir hai yahan nohay sunana

mai ye hasnain samjha is sada se
ata hai noor ye shahe huda se
karam hai ye ataye sayyeda se
mai zinda aa gaya....
Noha - Mai Zinda Aagaya Hoo
Shayar: Noor Ali  Noor
Nohaqan: Hasnain Abbas
Download Mp3
Listen Online