ہائے زندان میں رو رو کے سکینہ نے کہا
کر دیئے مجھ سے میرے بھائی میرے بابا جُدا

یاد آتی ہے تو دل روتا ہے خون کے آنسو
ورد پانی کے میرے بھائی کو ہے تیر ملا
ہائے زندان میں ۔۔۔۔۔

نوکِ نیزہ پہ ہے بھائی بہن ہے سر ننگے
نانا اُمت نے تیری کیساہمیں اجر دیا
ہائے زندان میں ۔۔۔۔۔

میں قفس میں ہوں تو مقتل میں ہے بھیا اکبر
پاس لائیوں میں تیرے کیسی سکینہ کو بتا
ہائے زندان میں ۔۔۔۔۔

چچا عباس کہاں ہو کہاں بتائوں تجھے
پھوپھی زینب کے ہے سر سے چھینی ظالم نے ردا
ہائے زندان میں ۔۔۔۔۔

جب تلک زندہ رہوں نوحے تیرے لکھتا رہوں
ہو نہ مشتاق کو غم کوئی غم کے سوا
ہائے زندان میں ۔۔۔۔۔


haaye zindaan may ro ro ke sakina ne kaha
kerdiye mujhse mere bhai mere baba juda

yaad aati hai to dil rota hai khoon ke aansu
wird pani ke mere bhai ko hai teer mila
haaye zindaan may....

noke naiza pe hai bhai behan hai sar nange
nana ummat ne teri kaisa hamay ajar diya
haaye zindaan may....

main kafas may hoo to maqtal may hai bhaiya akbar
paas layun mai tere kaisi sakina ko bata
haaye zindaan may....

chacha abbas kahan ho kahan bataun tujhe
phuphi zainab ke hai sar se cheeni zaalim ne rida
haaye zindaan may....

jab talak zinda rahun nowhe tere likhta rahun
ho na mushtaq ko gham koi gham ke siwa
haaye zindaan may....
Noha - Haye Zindan May
Shayar: Mushtaq
Nohaqan: Irfan Hussain
Download Mp3
Listen Online