ہائے اکبر میرے اکبر
شہ کے دلاور اکبر
بہناکے دلبر اکبر
شبیہہ پیعمبر اکبر

عباس کے مرنے سے ٹوٹی ہے کمر میری
بے نور ہوئی تیرے مرنے سے نظر میری
گھیرے ہوئے ہے مجھ کو دو لاکھ کا یہ لشکر
ڈھونڈوں میں کہا تجھ کو دو مجھ کو صدا اکبر
بے بسی کا عالم ہے
آنکھیں میری پُرنم ہیں
دل میں جو تیرا غم ہے
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

لگتی ہے مجھ کو بیٹا ہر اک قدم پہ ٹھوکر
کیا تُو گیا کے میرا برباد ہو گیا گھر
شادی کا تیرے ارماںدل میں لیے ہے مادر
اُس کو بتائوں کیسے یہ حال تیرا دلبر
کیا میں کہوں گا جا کر
پوچھے جو تیری مادر
کہاں ہے میرا اکبر
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

اے کاش اگر تیری کوئی اولاد اگر ہوتی
تُو خود ہی سمجھ لیتا اس باپ پہ کیا گُزری
مرتے ہوئیے جواں کو دیکھے اگر ضعیفی
دُنیا میں اس سے بڑھ کر ہو گی نہ بدنصیبی
کس سے کروں گا فریاد
ہو گیا جو گھر برباد
جی نہ سکوں تیرے بعد
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

سیرت میں آئینہ ہو صورت میں آئینہ ہو
تُو بولتی ہوئی اک تصویر ِ مصطفیٰ ہو
عدلِ بہادری میں تم مثلِ مرتضیٰ ہو
جان دے کے یہ بتایا تم ابنِ لا فتاح ہو
لُٹ گئی میری دُنیا
غم کا ہے اک سناٹا
مشکلوں کا ہے پہرا
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

مشکل کا مرحلہ ہے بابا یہ ناتواں ہے
کربلا کی خاک پر اب مرنے کو نوجواں ہے
منظر کو دیکھ کر یہ خوں رویا آسماں ہے
منظر لہو لہو ہے دل سوز اک سماں ہے
غم کا چھایا سایہ ہے
تنہا تیرا بابا ہے
موت کا اندھیرا ہے
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

لاشہ میں تیرا لے کر خیمے میں کیسے جائوں
پوچھے اگر سکینہ کیا اُس کو میں بتائوں
پالا تھا جس پھوپھی نے کیا حال میں سُنائوں
حالات ہیں غیر میری ہمت کہاں سے لائوں
اب نہ رہی کوئی آس
نہ رہا بھائی عباس
تُو بھی نہیں میرے پاس
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔

کر ب و بلا کے بن میں سرور کی ناتوانی
کیسے رقم ہو احمد بے کس کی یہ ناتوانی
دیکھا ہے ضعیفی نے مرتی ہوئی جوانی
رودادِ غمِ سرور محسن تیری زبانی
اب نہ رہی کوئی آس
نہ رہا بھائی عباس
تُو بھی نہ رہا اب پاس
ہائے اکبر ۔۔۔۔۔


haye akbar mere akbar
sheh ke dilawar akbar
behna ke dilbar akbar
shabihe payambar akbar

abbas ke marne se tooti hai kamar meri
be-noor hui tere marne se nazar meri
ghayre hue hai mujhko do laakh ka ye lashkar
dhoondoo mai kahan tujhko do mujhko sada akbar
bebasi ka aalam hai
aankhein meri purnam hai
dil may jo tera gham hai
haye akbar....

lagti hai mujhko meta har ek qadam pe thokar
kya tu gaya ke mera bardaad hogaya ghar
shadi ka tere arman dil may liye hai maadar
usko bataun kaise ye haal tera dilbar
kya mai kahunga jaakar
pooche jo teri maadar
kahan hai mera akbar
haye akbar....

ay kaash agar teri koi aulaad agar hoti
tu khud hi samajh leta is baap pe kya guzri
marte hue jawan ko dekhe agar zaeefi
dunya may is se badkar hogi na badnaseebi
kis se karoonga faryaad
hogaya jo ghar barbaad
jee ne sakun tere baad
haye akbar....

seerat may aaena ho surat may aaena ho
tu bolti hui ek tasveer e mustufa ho
adl e bahaduri may tum misle murtaza ho
jaan deke ye bataya tum ibne lafata ho
lutgayi meri dunya
gham ka hai ek sannata
mushkilo ka hai pehra
haye akbar....

mushkil ka marhala hai baba ye natawan hai
karbal ki khaak par ab marne ko naujawan hai
manzar ko dekh kar ye khoon roya aasman hai
manzar lahoo lahoo hai dil soz ek sama hai
gham ka chaya saaya hai
tanha tera baba hai
maut ka andhera hai
haye akbar....

laasha mai tera lekar qaime may kaise jaun
pooche agar sakina kya usko mai bataun
paala tha jis phupi ne kya haal mai sunaun
haalat hai ghair meri himmat kahan se laaun
ab na rahi koi aas
na raha bhai abbas
tu bhi nahi mere paas
haye akbar....

karbobala ke ban may sarwar ki natawani
kaise raqam ho ahmed bekas ki ye natawani
dekha hai zaeefi ne marti hui jawani
roodad e ghame sarwar mohsin teri zubani
ab na rahi koi aas
na raha bhai abbas
tu bhi na raha ab paas
haye akbar....
Noha - Haye Akbar
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online