ہے علمدار علمدار علمدار عباس

تُو نے قرباں دلو جاں کیئے سرور پر
بی بی زہرا کے پسر لختِ دلِ حیدر پر
تُو ہی بھائی تنِ تنہا تھا ہر اک لشکر پر
لشکرِ شام تھا عباس تیری ٹھوکر پر
تُو بھی ہے مثلِ علی حق کا ولی شیرِ خدا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔

تجھ کو بیٹا کہا زہرا نے شرف تیرا ہے
کربلا تیری مدینہ و نجف تیرا ہے
جو بھی دشمن ہے شاہِ دیں کا ہدف تیرا ہے
کھیلنا تیغ سے خنجر سے شفق تیرا ہے
حیدری وار ہے عباس ہر اک وار تیرا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔

صبر کے تاج کا اک دائمی عکس ہے تُو
کتنے جذبوں کا حکی در کر و احساس ہے تُو
خیمئہ شاہ میں پیاسوں کے لیے آس ہے تُو
ناز تجھ پر ہے شجاعت کو کے عباس ہے تُو
صاحبِ حق و یقیںمالکِ تسلیم و رضا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔

کربلا کیا ہے وفائوں کے سمندر کے سوا
صبر و ایثار ہے کیا جب تیرے پیکر کے سوا
دینِ حق اور ہے کیا ضربتِ حیدر کے سوا
دین کی بنیاد ہے کیا سجدئہ سرور کے سوا
قوتِ بازوئے شبیر رُخِ حق کی رضا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔

راہِ اسلام میں ہاتھوں کو کٹایا تُو نے
ظلم جھیلا کبھی سر نہ جھُکایا تُو نے
لفظِ بیعت کو زمانے سے مٹایا تُو نے
پرچمِ دینِ الٰہی کو بچایا تُو نے
تجھ پہ قربان دل و جاں وفائوں کے خدا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔

آبرو پیاس کی رکھ لی ہے ہونٹوں نے
ہاتھ اسلام کو بخشے ہیں تیرے شانوں نے
علم و مشک سنبھالا ہے تیرے دانتوں نے
حق کو زخموں سے بچایا ہے تیرے زخموں نے
گونجتی فضا میں ہے اختر و محسن کی صدا
ہے علمدار ۔۔۔۔۔


hai alamdar alamdar alamdar abbas

tune qurbaan dil o jaan kiye sarwar par
bibi zehra ke pisar lakhte dile hyder par
tu hi bhai tane tanha tha har ek lashkar par
lashkar e shaam tha abbas teri thokar par
tu bhi hai misle ali haq ka wali sher e khuda
hai alamdar....

tujhko beta kaha zehra ne sharaf tera hai
karbala teri madina o najaf tera hai
jo bhi dushman hai shahe deen ka hadaf tera hai
khelna taygh se khanjar se shafaq tera hai
hyderi waar hai abbas har ek waar tera
hai alamdar....

sabr ke taaj ka ek daaye mi akkas hai tu
kitne jasbo ka haki dar kar o ehsaas hai tu
qaima e shah may pyason ke liye aas hai tu
naaz tujhpar hai shujaat ko ke abbas hai tu
sahibe haq o yaqeen maalike tasleem o raza
hai alamdar....

karbala kya hai wafaon ke samandar ke siwa
sabr o eeqaar hai kya jab tere paikar ke siwa   
deen e haq aur hai kya zarbat e hyder ke siwa
deen ki bunyad hai kya sajda e sarwar ke siwa
quwwate baazu e shabbir ruqe haq ki riza
hai alamdar....

raahe islam may haathon ko kataya tune
zulm jhela kabhi sar na jhukaya tune
lafze bayyat ko zamane se mitaya tune
parchame deen e elaahi ko bachaya tune
tujhpe qurban dil o jaan wafaon ke khuda
hai alamdar....

aabroo pyas ki rakhli hai tere honton ne
haath islam ko bakshe hai tere shano ne
alam o mashk sambhala hai tere daaton ne
haq ko zakmo se bachaya hai tere zakhmo ne
goonjti fiza may hai akhtar o mohsin ki sada
hai alamdar....
Noha - Hai Alamdar Abbas
Shayar: Akhtar
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online