گھر چلو گھر چلو اے سکینہ
قبرِ زنداں پہ زینب پُکاری
ہو گئی ہے رہائی ہماری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

پوچھتی تھی یہ ہر بار مجھ سے
دیکھ کر آسماں کے پرندے
پھوپھی اماں یہ مجھ کو بتا دو
کب تلک جائیں گے ہم مدینے
اُٹھو اُٹھو سرور کی پیاری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

کان زخمی ہیں اب تک ہمارے
اُٹھو مرہم اُنہیں میں لگادوں
گر تم نہ ساتھ آئو ہمارے
کیسے غازی کو چہرہ دیکھائوں
اپنے عموں کی تم ہو دُلاری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

ہے عجب کا اندھیرا یہاں پر
اور کسی سمت اُجالا نہیں ہے
ہے پرائی یہ بستی یہاں کی
کوئی غمخوار اپنا نہیں ہے
ہو گئی یہ پھوپھی تم پہ واری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

اب تو پیدل بھی تم نہ چلو گی
اور نہ ظلم و ستم کو سہو گی
نہ رسن سے کوئی باندھے گا تم کو
اور نہ ہاتھوں سے پردہ کرو گی
مل گئی ہے جو چادر تمہاری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

جب میں جائوں گی اپنے وطن کو
اُجڑے گھر کو میں سہہ نہ سکوں گی
میری معصوم میری سکینہ
یہ بتائو اُسے کیا کہوں گی
تم کو پوچھے جو بہنا تمہاری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

کربلا کی زمیں پہ ہے ا صغر
اور ساتھ اُس کے سوئے ہیں سرور
کون دلاسا اُسے دے گا دلبر
جو یہاں سو گئی ہو زمیں پر
مر نہ جائے یہ مادر تمہاری
گھر چلو ۔۔۔۔۔

قید ِ زنداں سے ہائے احمد
اب تلک بھی رہا ہو نہ پائی
شہ کی اک لادلی کو اے محسن
یہ چمن کس طرح راس آئی
کہہ رہی تھی پھوپھی غم کی ماری
گھر چلو ۔۔۔۔۔


ghar chalo ghar chalo ay sakina
qabre zindan pe zainab pukari
hogayi hai rehaai hamari
ghar chalo....

poochti thi ye har baar mujhse
dekh kar aasman ke parinde
phupi amma ye mujhko batado
kab talak jayenge hum madine
utho utho sarwar ki pyari
ghar chalo....

kaan zakhmi hai ab tak tumhare
utho marham unhe mai lagadoo
gar tum na saath aao hamare
kaise ghazi ko chehra dikhaun
apne ammu ki tun ho dulaari
ghar chalo....

hai ajab ka andhera yahan par
aur kisi simt ujaala nahi hai
hai parayi ye basti yahan ki
koi ghamkhwar apna nahi hai
hogayi ye phupi tumpe waari
ghar chalo....

ab to paidal bhi tum na chalogi
aur na zulm o sitam ko sahogi
na rasan se koi baandhega tumko
aur na haathon se parda karogi
milgayi hai jo chadar tumhari
ghar chalo....

jab mai jaungi apne watan ko
ujde ghar ko mai seh na sakungi
meri masoom meri sakina
ye batao usay kya kahoongi
tumko pooche jo behna tumhari
ghar chalo....

karbala ki zameen pe hai asghar
aur saath uske soye hai sarwar
kaun dilaasa usay dega dilbar
jo yahan sogayi ho zameen par
mar na jaye ye maadar tumhari
ghar chalo....

qaid e zindan se haye ahmed
ab talak bhi reha ho na paayi
sheh ki ek laadli ko ay mohsin
ye chaman kis tarha raas aayi
keh rahi thi phupi gham ki maari
ghar chalo....
Noha - Ghar Chalo Ay Sakina
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online