غم سکینہ کو ملے اتنے مسلمانوں سے
مر گئی پر نہ کبھی ہاتھ ہٹے کانوں سے

شام جاتے ہوئے ناقے سے گری یوں بچی
مشک غازی کی گری جیسے کٹے شانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔

چونک اٹھتی تھی مدینے میں یہ کہہ کر بانو
کوئی آواز مجھے دیتا ہے ویرانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔

کتنی بے رحمی سے ظالم نے اُتارے وہ گوہر
شہ نے بیٹی کو جو پہنائے تھے ارمانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔

مجھ کو کُرتے میں ہی دفنانا سکینہ نے کہا
مت کفن مانگنا اے بھائی مسلمانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔

کوئی غیبت میں اُنہیں دیکھ کے خوں روتا ہے
رِستا رہتا ہے لہو آج بھی جن کانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔

سب چلے جاتے ہیں شبیر کو رو کر اکبر
ایک بچی نہیں جاتی ہے اعزاخانوں سے
غم سکینہ کو ملے ۔۔۔۔۔


gham sakina ko milay itne musalmano se
mar gari par na kabhi haath hatay kaano se

shaam jaate hue naaqe se giri yun bachi
mashk ghazi ki giri jaise katay shano se
gham sakina ko milay....

chaunk uth-ti thi madine may ye keh kar bano
koi awaaz mujhe deta hai veerano se
gham sakina ko milay....

kitni berahmi se zaalim ne utaare wo gohar
sheh ne beti ko jo pehnaye thay armaano se
gham sakina ko milay....

mujhko kurte may hi dafnana sakina ne kaha
mat kafan maangna ay bhai musalmano se
gham sakina ko milay....

koi ghairat may unhe dekh ke khoon rota hai
jiska behta hai lahoo aaj bhi jin kaano se
gham sakina ko milay....

sab chale jaate hai shabbir ko rokar akbar
ek bachi nahi jaati hai azakhano se
gham sakina ko milay....
Noha - Gham Sakina Ko Milay
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online