اک سر کیا تھا شہیدِ کربلا کے سامنے
رکھ دیئے شہ نے بہتر سر خُدا کے سامنے

جھلملاتے ہی رہیں گے حشر تک اشکِ اعزا
جھلملاتے ہیں رہیں گے یہ دیئے ہم نے جلائے ہیں ہوا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

اے طبیبِ عصرِ دوراں کیا مسیحائی تیری
اے طبیبِ عصرِ دوراں خاک ہے تیری دوا خاک ِ شفائ کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

حشر تک وہ لوگ رُسوائے زمانہ ہو گئے
حشر تک وہ لوگ رُسوا آگئے تھے جو شاہِ کرب و بلا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

چھا گیا بن کر جلالِ حیدری دربار میں
چھا گیا بن کر جلالِ خطبہِ زینب یزیدِبے حیا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

اپنا سر ساحل سے ٹکرانے لگی موجِ فرا،ت
اپنا سر ساحل سے ٹکرا جب سکینہ مشک لائی تھی چچا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

دیکھیئے کیا ہو بوقتِ عزن ماں کے دل کا حال
دیکھیئے کیا ہو بوقتِ لائیں گے قاسم کوجب دولہا بنا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

تیر جب اصغر نے کھایا رو رہے تھے اشقیائ
تیر جب اصغر نے کھایا اور اصغر ہنس رہے تھے اشقیائ کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

لے گیا سر کاٹ کر شبیر کا شمرِ لعین
لے گیا سر کاٹ کر زینب ِ خستہ جگر کی التجا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

ثانیئے زہرا کے سرسے اُس ردا کو لے گئے
ثانیئے زہرا کے سر سے دونوں عالم سر نگوں تھے جس ردا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔

میں نے پائی سر بلندی میں نے پایا ہے عروج
میں نے پائی سر بلندی سرجھکا رہتا ہے میرا کربلا کے سامنے
اک سر کیا تھا ۔۔۔۔۔


ek sar kya tha shaheede karbala ke saamne
rakhdiye sheh ne bahattar sar khuda ke saamne

jhil-milate hi rahenge hashr tak ashk e aza
jhil-milate hi rahenge ye diye hamne jalaye hai hawa ke saamne
ek sar kya tha....

ay tabeeb e asr dauran kya maseehai teri
ay tabeeb e asr dauran khaak hai teri dawa khake shafa ke saamne
ek sar kya tha....

hashr tak wo log ruswaye zamana hogaye
hashr tak wo log ruswa aagaye thay jo shahe karbobala ke saamne
ek sar kya tha....

chagaya bankar jalale hyderi darbar may
chagaya bankar jalale khutbaye zainab yazeede behaya ke saamne
ek sar kya tha....

apna sar saahil se takrane lagi mauje furaat
apna sar takra jab sakina mashk laayi thi chacha ke saamne
ek sar kya tha....

dekhiye kya ho ba waqte izn maa ke dil ka haal
dekhiye kya ho ba waqte laayenge qasim ko jab dulha bana ke saamne
ek sar kya tha....

teer jab asghar ne khaya ro rahe thay ashkiyan
teer jab asghar ne khaya aur asghar has rahe thay ashkiyan ke saamne
ek sar kya tha....

le gaya sar kaat kar shabbir ka shimr e layeen
le gaya sar kaat kar zainab e khasta jigar ki ilteja ke saamne
ek sar kya tha....

saniye zehra ke sar se us rida ko le gaye
saniye zehra ke sar se dono aalam sar nagoo thay jis rida ke saamne
ek sar kya tha....

maine paayi sar balandi maine paaya hai urooj
maine paayi sar balandi sar jhuka rehta hai mera karbala ke saame
ek sar kya tha....
Noha - Ek Sar Kya Tha
Shayar: Urooj Bijnori
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online