اک مہرِ کربلا اور اُس کی تنویریں بہت
آئینے میں یوں نظر آتی ہیں تصویریں بہت

حاصل اشکِ غمِ شبیر جنت ہی نہیں
خُلد سے پہلے بھی ہیں مخصوص جاگیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔

توں بھی خاکِ کربلا اپنی جبیں پر مل کے دیکھ
ہم نے یوں بنتے ہوئے دیکھیں ہیں تقدیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔

رشتہِ قرآن ۔ و۔ اہلیبیت کیا سمجھیں گے وہ
اپنی مرضی سے جو کر لیتے ہیں تفسیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔

تھا علی کا شیر آیا اور پانی لے گیا
سر پٹختی رہ گئیں دریا پہ شمشیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔

راستے کی ہر کڑی زنجیر کٹ کرگِر گئی
تھی اگرچہ پائوں میں عابد کے زنجیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔

اس میں شامل ہے لہو سبطِ پیعمبر کا عروج
کیوں نہ رکھے کربلا کی خاک تاسیریں بہت
اک مہرِ کربلا ۔۔۔۔۔


ek mehre karbala aur uski tanveere bahot
aaene may yun nazar aati hai tasveere bahot

haasile ashke ghame shabbir jannat hi nahi
khuld se pehle bhi hai maqsoos jaagere bahot
ek mehre karbala.....

rishta e quran o ahlebait kya samjhenge wo
apni marzi se jo karlete hai tafseere bahot
ek mehre karbala.....

tha ali ka sher aaya aur pani le gaya
sar patakti reh gayi darya pe shamsheere bahot
ek mehre karbala.....

raaste ki har kadi zanjeer kat kar gir gayi
thi agarche paon may abid ke zanjeere bahot
ek mehre karbala.....

isme shaamil hai lahoo sibte payambar ka urooj
kyun na rakhe karbala ki khaak taaseere bahot
ek mehre karbala.....
Noha - Ek Mehre Karbala
Shayar: Urooj Bijnori
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online