ہاے اکبر ہاے اکبر
بابا میرے بابا
ہاے اکبر

دیکے آواز باپ کو اکبر سوچتے ہیں کے آینگے کیسے
لڑکھڑاتے ہوے جو آ بھی گئے ہا ے میرا لاشہ اٹھاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو ...

حرکے بیٹے کی لاش پر حر سے کہ رہے تھے ابھی یہی بابا
باپ لاشے جوان اٹھاتا نہیں اسکا لاشہ میں خود اٹھاؤنگا
اب وہی مرحلہ ہے بابا پر میرے لاشہ اٹھاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

اک محشر بپا تھا خیمہ میں ماں سے جس دم گیا تھا میں ملنے
آکے بابا نے اس گھڑی دامن خود چھڑایا تھا میری بہنوں سے
میرا دامن چھڑانا آسان تھا دل سے برچھی چھڈاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

فکر برچھی کی کچھ نہیں مجھکو دل میں بس یہ خیال آتا ہے
اپنے کڑیل جواں کے لاشے پر جیتے جی باپ مر ہی جاتا ہے
اس ضعیفی میں اک سات پدر دو جنازے اٹھاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

اب میں سمجھا کے کس لئے بابا میرے سینے کو چوما کرتے تھے
یاد آتی تھی انکو جب صغرا میری آنکھوں میں  دیکھا کرتے تھے
غم ہے اب میرا میری آنکھوں میں مجھ سے نظریں ملاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

اینا اینا علی الاکبر کی رن میں آواز جب وہ دیتے ہیں
ہا ے غربت غریب زہرہ کی دیکھ کر شام والے ہنستے ہیں
راستہ انکو مجھ تک آنے کا پھر یہ قاتل بتاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

قتل شببر کی ہے تیاری رن میں چمکا رہے ہیں سب خنجر
برچھی سینے میں ہے میرے لیکن اتنا مجبور بھی نہیں اکبر
شام کے لوگ میرے ہوتے ہوے شہ پہ خنجر چلاینگے کیسے
دیکے آواز باپ کو

آنکھ میں اشک لیب پی نوحہ تھا اے تکلّم عجیب لمحہ تھا
دل میں وہ بار بار کہتا تھا آنے والا ہے قاصد صغرا
بھائی کی لاش پر میرے بابا خط بہن کا سناینگے
دیکے آواز باپ کو


haye akbar haye akbar
baba mere baba
haye akbar..

deke awaaz baap ko akbar sochte hai ke aayenge kaise
ladkhadate huwe jo aa bhi gaye haye mera laasha uthayenge kaise
deke awaaz baap ko...

hur ke bete ki laash par hur se keh rahe thay abhi yehi baba
baap laashe jawan uthata nahi iska lasha mai khud uthaunga
ab wahi marhala hai baba par mere laasha uthayenge kaise
deke awaaz baap ko...

ek mehshar bapa tha qaimay may maa se jis dam gaya tha mai milne
aake baba ne us ghadi daaman khud chudaya tha meri behno se
mera daaman chudana aasan tha dil se barchi chudayenge kaise
deke awaaz baap ko...

fikr barchi ki kuch nahi mujko dil may bas ye khayal aata hai
apne kadiyal jawan ke laashe par jeete jee baap mar hi jaata hai
is zaeefi may ek saat padar do janaze uthayenge kaise
deke awaaz baap ko...

ab mai samjha ke kis liye baba mere seene ko chooma karte thay
yaad aati thi unko jab sughra meri aakhon may dekha karte thay
gham hai ab mera meri aakhon may mujhse nazrein milayenge kaise
deke awaaz baap ko...

ayna ayna ali-ul akbar ki ran may awaaz jab wo dete hai
haye ghurbat ghareeb e zehra ki dekh kar shaam waale haste hai
raasta unko mujh tak aane ka phir ye qaatil batayenge kaise
deke awaaz baap ko...

qatle shabbir ki hai tayyari ran may chamka rahe hai sab khanjar
barchi seene may hai mere lekin itna majboor bhi nahi akbar
shaam ke log mere hote huwe sheh pe khanjar chalayenge kaise
deke awaaz baap ko...

aankh may askh lab pe nauha tha ay takallum ajeeb lamha tha
dil may wo baar baar kehta tha aane wala hai qaaside sughra
bhai ki laash par mere baba khat behan ka sunayenge kaise
deke awaaz baap ko...
Noha - Deke Awaaz Baap Ko
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online