ہا ے قاسم ہا ے قاسم
دشت میں ابن حسن پر وقت کیسا آگیا
اک گھٹڑی میں فقط قاسم کا لاشہ آگیا
دشت میں ابن حسن

چار کندھوں پر جنازہ گھر میں آتا ہے مگر
اک ہی کندھے پہ یہ اسکا جنازہ آگیا
دشت میں ابن حسن

جس طرح چنتا ہے مالی پھول اپنے باغ کے
ٹکڑے یوں قاسم کے چننے میرا مولا آگیا
دشت میں ابن حسن

چوم کر تعویز سرور دیر تک روتے رہے
بھائی کے لفظوں میں جانے یاد کیا کیا آگیا
دشت میں ابن حسن


آگئی بارات رن سے رو کے فضا نے کہا
بیبیوں تعظیم کو اٹھ جاؤ دولہا آگیا
دشت میں ابن حسن

لاش کو ترتیب جب دینے لگا زہرہ کا لال
بارہا مولا کی آنکھوں میں اندھیرا آگیا
دشت میں ابن حسن

باپ کا تعویز تھا  بیٹے کے بازو پر بندھا
اس لئے پہچان میں قاسم کا لاشہ آگیا
دشت میں ابن حسن

ماتمی کے گھر میں اکبر جب کوئی دولہا بنا
یاد سب کو کربلا والے کا سہرا آگیا
دشت میں ابن حسن


haye qasim haye qasim
dasht may ibne hassan par waqt kaisa aagaya
ek ghatri may faqat qasim ka laasha aagaya
dasht may ibne...

chaar kaandho par janaza ghar may aata hai magar
ek hi kaandhe pe ye iska janaza aagaya
dasht may ibne...

jis tarha chunta hai maali phool apne baagh ke
tukde yun qasim ke chun-ne mera maula aagaya
dasht may ibne...

choom kar taawiz sarwar dayr tak rotay rahe
bhai ke lafzo may jaane yaad kya kya aagaya
dasht may ibne...

aagayi baraat ran se ro ke fizza ne kaha
bibiyo tazeem ko uth jao dulha aagaya
dasht may ibne...

laash ko tarteeb jab dene laga zahra ka laal
baarha maula ki aakhon may andhera aagaya
dasht may ibne...

baap ka taweez tha bete ke baazu par bandha
is liye pehchan may qasim ka laasha aagaya
dasht may ibne...

matami ke ghar may akbar jab koi dulha bana
yaad sab ko karbala walay ka sehra aagaya
dasht may ibne...
Noha - Dasht May Ibne
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online