دارونا جنگل ہے رات اندھیری ستارے کچھ جھل ملا رہے ہیں
پڑے ہیں ریتی پر چاند لاشے جو اپنا غم آ پ کھا رہے ہیں

ہے ایسا بگڑا ہوا زمانہ، نہ گور اور نہ شامیانہ
فلک پہ ابرِ سیاہ کے لگ کے، اُداسی بن بن کے چھا رہے ہیں
دارونا جنگل ۔۔۔۔۔

نہ کوئی لاشوں پہ رونے والا،نہ کوئی زخموں کا دھونے والا
پرند کچھ کر رہے ہیں نالے،درند کچھ خاک اُڑا رہے ہیں
دارونا جنگل ۔۔۔۔۔

شکستہ ہتھیار کچھ پڑے ہیں، یہ لوگ شاید یہاں لڑے ہیں
لڑے تو وہ ہوں گے جو بڑے ہیں، نظر تو بچے بھی آ رہے ہیں
دارونا جنگل ۔۔۔۔۔

حرم پہ کیا گزری بعد ان کے، نہیں ضرورت کے کوئی پوچھے
جلے ہوئے جو پڑے ہیں خیمے،وہ اُن کا لُٹنا بتا رہے ہیں
دارونا جنگل ۔۔۔۔۔

شفاعتِ حشر کرنے والے،کہیں جو وہ کر گزرنے والے
غیور ہیں وہ مرنے والے،جو ہم کو اب تک رُلا رہے ہیں
دارونا جنگل ۔۔۔۔۔


darona jungal hai raat andheri sitare kuch jhil mila rahay hai
paday hai reti par chand laashe jo apna gham aap khaa rahay hai

hai aisa bigda hua zamana, na gor aur na shaamiyana
falak pe abre siya ke lagke, udaasi ban ban ke cha rahay hai
darona jungal...

na koi laashon pe ronay wala, no koi zakhmo ka dhonay wala
parind kuch kar rahy hai naalay, darind kuch khaakh udaa rahay hai
darona jungal...

Shikista hatyaar kuch paday hai, ye log shayad yahan laday hai
laday to woh hongay jo baday hai, nazar to bachche bhi aa rahay hai
darona jungal...

Haram pe kya guzri baad inkay, nahi zaroorat kay koi poochay
jalay hue jo paday hai khaimay, woh unka lutna bata rahay hai
darona jungal...

Shafa-at-e hashr karnay wale, kahin jo woh kar guzarny wale
ghayoor hai woh marnay wale, jo humko abtak rula rahay hai
darona jungal...
Noha - Darona Jungal