Noha - Chalna Hai Tumhe
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online


جب مدینے میں پائے کر ب و بلا
دستِ قدرت کا سوارا ہوا مہظر اُترا
غور سے زینب و شبیر نے اُس کو دیکھا
اُس میں لکھا تھا کے کیا ہو گا پاسائے قتل جفا
امتحان بانٹ لیئے بھائی بہن نے مل کر
دے گا سر کون فدا کون کرے گا چادر

میں نوکِ سِناں پہ چلائوں گا بہن
چلنا ہے تمہیں بازاروں میں

پامال بدن ہو گا میرا
جانا ہے تمہیں بازاروں میں
میں نوکِ سناں ۔۔۔۔۔

آغازِ سفر انجامِ سفر
ہے سخت بہت میں نے مانا
مجھے یاد ہے اب تک اے زینب
نانا سے کیا تھا جو وعدہ
میں تیرا دین بچائوں گا
قربان کروں گا سر اپنا
قربان ردا تم کر دینا
میں نوکِ سناں ۔۔۔۔۔

تم بھی ہو شریکِ کار میری
غازی کی طرح اکبر کی طرح
اک جنگ تمہیں بھی لڑنی ہے
بے تیغ علی اصغر کی طرح
سر عون و محمد کے ہونگے
تر خون میں میرے سر کی طرح
تم عزمِ علی دکھلا دینا
میں نوکِ سناں ۔۔۔۔۔

جب اہلِ حرم قیدی بن کر
پابندِ رسن ہمراہ تیرے
جانے جو لگے بریدئہ تر
اور قافلہ مقتل سے گزرے
کوشش کرنا اُس عالم میں
ہم کو نہ سکینہ دیکھ سکے
تم اُس کا دھیان بٹا دینا
میں نوکِ سناں ۔۔۔۔۔

جس نوکِ سناں پر سر ہو میرا
جب دیکھو سناں وہ رُک گئی ہے
اُس وقت سمجھ لینا زینب
ناقے سے سکینہ گر گئی ہے
جب دیکھنا عابد کی جانب
بدکار نظر کوئی اُٹھ گئی ہے
خطبوں کی تیغ چلا دینا
جس نوکِ سناں ۔۔۔۔۔

ریحان و رضا کیا منظر تھا
جس وقت کنیزی میں مانگا
دربار میں اُس شہزادی کو
ہاں نام سکینہ تھا جس کا
اُس تازہ ستم پر عابد اور
زینب کا بدن بھی کانپ گیا
یہ بات نہ تم دوہرا دینا
جس نوکِ سناں ۔۔۔۔۔


jab madine may paye karbobala
daste khudrat ka sawara hua mehzar utra
ghaur se zainab o shabbir ne usko dekha
usmay likha tha ki kya hoga pasay qatl jafa
imtehan baat liye bhai behan ne milkar
dega sar kaun fida kaun karega chadar

mai noke sina pe chalunga behan
chalna hai tumhe bazaron may

pamaal badan hoga mera
jaana hai tumhay bazaron may
mai noke sina....

aaghaze safar anjame safar
hai sakht bahot maine maana
mujhe yaad hai ab tak ay zainab
nana se kiya tha jo wada
mai tera deen bachunga
qurban karunga sar apna
qurban rida tum kar dena
mai noke sina....

tum bhi ho shareeke kaar meri
ghazi ki tarha akbar ki tarha
ek jang tumhay bhi ladni hai
be taygh ali asghar ki tarha
sar auno mohamed ke hongay
tar khoon may mere sar ki tarha
tum azm-e-ali dikhla dena
mai noke sina....

jab ahle haram qaidi bankar
pabande rasan humraah tere
jane jo lagay badida e tar
aur khafila maqtal se guzre
koshish karna us aalam may
hum ko na sakina dekh sakay
tum uska dhyan bata dena
mai noke sina....

jis noke sina par sar ho mera
jab dekho sina wo rukh gayi hai
us waat samajh lena zainab
naaqe se sakina gir gayi hai
jab dekhna abid ki jaanib
badh kaar nazar koi uth gayi hai
khutbo ki taygh chala dena
jis noke sina....

rehan o raza kya manzar tha
jis waqt kaneezi may maanga
darbar may us shehzadi ko
haa naam sakina tha jiska
us taaza sitam par abid aur
zainab ka badan bhi kaamp gaya
ye baat na tum dohradena
jis noke sina....