چلا جب قافلے کو لے کے سوئے قوفہ و شام
میرا مظلوم امام
سر کُھلے زینب ِ مُضطر تھی اور تھا مجمعِ عام
میرا مظلوم امام

سر جھکائے ہوئے یوں چلتے رہے شاہِ اُمم
اور بڑھ جاتا تھا یہ دیکھ کہ بیمار کا غم
بے ردا تھی پھوپھی اور شام کا بازارِ عام
میرا مظلوم امام
چلا جب قافلے ۔۔۔

پائوں میں بیڑیاں تھیں اورطوق گلے میں تھا پڑا
اُس پہ بیمار کے ہاتھوں پہ عدو کے دُرے
غش کئی بار سفر میں ہوئے بیمار امام
میرا مظلوم امام
چلا جب قافلے ۔۔۔

رو رو کہتی تھی سکینہ پھوپھی اب کیا ہو گا
جُھولا جلنے لگا بھائی بھی میرا رن کو گیا
آگ خیموں میںلگی جل گیا اسباب تمام
میرا مظلوم امام
چلا جب قافلے ۔۔۔

لاشِ قاسم کو سمیٹا شاہِ دیں نے جس دم
مہندی ہاتھوں پہ لگی دیکھ کے روتے تھے حرم
رنگ یہ سہرے کی ملی ساتھ میں کیسا تھا ستم
میرا مظلوم امام
چلا جب قافلے ۔۔۔

خون ٹپکتا تھا ہائے حسن نوکِ قلم سے اب تو
دل پھٹا جاتا ہے اس سوزِ آلم سے اب تو
گِریہ کرتے ہیں ملک رو کہ یہی صُبح و شام
میرا مظلوم امام
چلا جب قافلے ۔۔۔


chala jab khaafile ko leke suye koofa o shaam
mera mazloom imam
sar khule zainab e muztar thi aur tha majma e aam
mera mazloom imam

sar jhukaye hue yun chalte rahe shahe umam
aur bad jaata tha ye dekh ke bemaar ka gham
berida thi phuphi aur shaam ka bazaar e aam
mera mazloom imam
chala jab khaafile....

baahon may bediyan thi aur tauq galay may tha pada
uspe bemaar ke haathon pe udoo ke durray
ghash kayi baar safar may hue bemaar imam
mera mazloom imam
chala jab khaafile....

ro ro kehti thi sakina phupi ab kya hoga
jhoola jalne laga bhai bhi mera ran ko gaya
aag qaimo may lagi jal gaya asbaab tamaam
mera mazloom imam
chala jab khaafile....

laashe qasim ko samayta shahe deen ne jis dum
mehendi haathon pe lagi dekh ke rotay thay haram
rang ye sehre ki mili saath may kaisa tha sitam
mera mazloom imam
chala jab khaafile....

khoon tapakta tha hai hassan noke qalam se ab to
dil phata jaata hai is soz e alam se ab to
girya karte hai malak roke yehi subho shaam
mera mazloom imam
chala jab khaafile....
Noha - Chala Jab Khafile
Shayar: Hassan
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online