چہلم کے لئے بھیاآئی ہے تیری زینب
اے میرے بھائی حسین

بھائی میں آگئی ہو ں نانا کا دیں بچا کے
جائوں گی اب مدینہ چہلم تیرا مناکے

معلوم ہے یہ تم کو زینب اُجڑچکی ہے
لیکن تیری شہادت گھر گھر پہنچ چکی ہے
شاباش دو بہن کو بھیا گلے لگا کے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

بھیا تمہاری زینب اب وہ نہیں رہی ہے
پہچان لوگے مجھ کو حالت بدل گئی ہے
چلتی ہے یہ ضعیفہ بھائی قمر جھکا کے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

سجاد اور باقر دینگے گواہی میری
کھائے ہیں تازیانے بنتِ علی نے پھر بھی
لے آئی شامیوں سے وار ث تیرے بچاکے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

کیسے بتائو وںبھیا بازار میںجو گزری
کہتے تھے سب کہ مارو یہ ہے علی کی بیٹی
بابا کے بھی میںبدلے سب آئی ہوں چکا کے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

اُمت نے تجھ پہ بھائی رونے کہاں دیا ہے
جی بھر کے میں نے تیرا ماتم کہاں کیا ہے
روئے گی آج زینب فرشِ عزائ بچھاکے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

گھر جاکے کیا کروں گی پہلو میں ہی سُلا لو
اکبر سے کہکے مجھکو تربت کی جا دلادو
مالک ہو تم تو بھائی جاگیرِکربلا کے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔

یہ کہکے اے تکلم اُٹھی علی کی بیٹی
عباس کی لحد پر پہنچا دے مجھ کو کوئی
دکھلادوںباوفا کو رسی کے نیل جاکے
بھیا میں آگئی ہوں۔۔۔


chehlum ke liye bhaiya aayi hai teri zainab
ay mere bhai hussain

bhaiya mai aagayi hoo nana ka deen bachake
jaaungi ab madina chehlum tera manake

maloom hai ye tumko zainab ujad chuki hai
lekin teri shahadat ghar ghar pahunch gayi hai
shabaash do behan ko bhaiya galay lagake
bhaiya mai aagayi hoo....

bhaiya tumhari zainab ab wo nahi rahi hai
pehchaan logay mujhko haalat badal gayi hai
chalti hai ye zaeefa bhai kamar jhuka ke
bhaiya mai aagayi hoo....

sajjad aur baaqir denge gawahi meri
khaye hai taaziyane binte ali ne phir bhi
le aayi shamiyon se waaris tere bacha ke
bhaiya mai aagayi hoo....

kaise bataun bhaiya bazaar may jo guzri
kehte sab ke maaro ye hai ali ki beti
baba ke bhi mai badle sab aayi hoo chuka ke
bhaiya mai aagayi hoo....

ummat ne tujhpe bhai rone kahan diya hai
jee bhar ke maine tera matam kahan kiya hai
roegi aaj zainab farshe aza bicha ke
bhaiya mai aagayi hoo....

ghar ja ke kya karoongi pehlu may hi sulaalo
akbar se kehke mujhko turbat ki jaa dilaado
maalik ho tum to bhai jageer e karbala ke
bhaiya mai aagayi hoo....

ye kehke ay takallum uthi ali ki beti
abbas ki lehad par pahuncha de mujhko koi
dikhladun ba-wafa ko rassi ke neel jaake
bhaiya mai aagayi hoo....
Noha - Bhaiya Mai Aagayi
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online