بھیا غریب زینب تیرا کفن نہ لائی
لاشِ حُسین پر ہے زینب کی یہ دُہائی

مثلِ بتول حق سے محروم ہوں میں اب تک
شبیر تیرے غم میں مغموم ہوں میں اب تک
تڑپا رہی ہے مجھ کو عباس کی جُدائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین

افسوس کے سکینہ نازوں سے جو پالی ہے
اُس کو ملی نہ بھیا زندان سے رہائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین

ہم پر ستم اے بھیا ڈھاتے رہے ستمگر
سیدانیوں کے سر میں آتی تھی خاک اُڑ کر
بازار کا وہ منظر زینب نہ بھول پائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین

بالوں سے منہ چھُپا کر بازار میں گئی تھی
نرغے میں اشقیائ کے بے پردہ میں کھڑی تھی
گزری ہے کیا بہن پر کیسے بتائوں بھائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین

سجاد کے یہ سر پر دُشوار مرحلہ تھا
زنجیر کو سنبھالے بیمار رو رہا تھا
آلِ نبی کھُلے سر دربار میں جو آئی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین

سب سے بڑی مصیبت کیاہے کسی نے پوچھا
بیمار سر جھُکا کر روتے ہوئے یہ بولا
بہنوں کا شام جانا زینب کی بے ردائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین ۔۔

اس اک سانح اکثر محب نے سوچا
برباد ہو گیا جب آلِ نبی کا کنبہ
بعدِ حسین کیونکر باقی رہی خدائی
بھیا غریب زینب ۔۔۔۔۔
اے میرے بھائی حُسین ۔۔


bhaiya ghareeeb zainab tera kafan na laayi
laashe hussain par hai zainab ki ye duhaayi

misle batool haq se mehroom hoo mai ab tak
shabbir tere gham may maghmoom hoo mai ab tak
tadpa rahi hai mujhko abbas ki judaai
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain

afsos ke sakina naazon se jo pali hai
jo tumko yaad karke zindan may chal basi hai
usko mili na bhaiya zindan se rehaai
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain

humpar sitam ay bhaiya dhaate rahe sitamgar
saydaniyo ke sar may aati thi khaak udkar
bazaar ka wo manzar zainab na bhool paayi
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain

baalon se moo chupakar bazaar may gayi thi
narghe may ashkiyan ke be-parda mai khadi thi
guzri hai kya behan par kaise bataun bhai
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain....

sajjad ke ye sar par dushwaar marhala tha
zanjeer ko sambhale bemaar ro raha tha
aale nabi khule sar darbaar may jo aayi
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain....

sabse badi musibat kya hai kisi ne poocha
bemaar sar jhuka kar rote huve ye bola
behno ka shaam jaana zainab ki be-ridayi
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain....

is ek saanahe aksar mohib ne socha
barbaad hogaya jab aale nabi ka kunba
baad e hussain kyun kar baaqi rahi khudaayi
bhaiya ghareeeb zainab....
ay mere bhai hussain....
Noha - Bhaiya Ghareeb Zainab

Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online