بہہ رہی ہے سامنے نہرِ فُرات
مصطفیٰ کی آل تشنہ کام ہے

کربلا میں شاد فوجِ شام ہے
ختم شاہِ دین کا سر انجام ہے

پیاس سے بچے ہیں شاہ کے جا ں بلب
عمر کا لبریز اُن کا جام ہے

خاتمہ بالخیر لشکر کا ہوا
حلق پیاسوں کا تہہِ شمشام ہے

پنجتن کا خاتمہ ہوتا ہے آج
غرق خوں میں کوکبِ اسلام ہے

شام کے بادل میں ہے مہوِ مُبین
ہے اندھیرا حشر کا ہنگام ہے
حالِ اصغر دیکھ کر بولے عدو
رحم کے قابل یہ تشنہ کام ہے

ہم پِلائیں گے اسے پانی ضرور
جاں بلب افسوس یہ گُلفام ہے

حُرملا سے پھر یہ بولا ناب کار
سچ بتا تُو طالبِ انعام ہے

شاہ کے ہاتھوں پہ جو ہے بے زباں
تشنہ لب دو دن سے یہ گُلفام ہے

چاہتا ہوں میں یہ مر جائے ابھی
تیرے اک تیرِ ستم کا کام ہے

وعدئہ طفلی بپا ہونے کو ہے
شاہ خوش ہیں قلب کو آرام ہے


beh rahi hai saamne nehre furaat
mustufa ki aal tishnakaam hai

karbala may shaad fauje shaam hai
khatm shahe deen ka sar anjaam hai

pyas se bache hai shah ke jaan balab
umr ka lab rez unka jaam hai

khatema bil khair lashkar ka hua
halq pyason ka tahe shamshaam hai

panjatan ka khatima hota hai aaj
garkh khoon may kaukab-e-islam hai

sham ke badal may hai mehve mubeen
hai andhera hashr ka hangaam hai

haale asghar dekh kar bole adoo
rehm ke khaabil ye tishnakaam hai

hum pilayenge isay pani zaroor
jaan balab afsos ye gulfaam hai

hurmula se phir ye bola naabkaar
sach bata tu taalibe inaam hai

shah ke hathon pe jo hai bezuban
tashnalab do din se ye gulfaam hai

chahta hoo mai ye marjaye abhi
tere ek teere sitam ka kaam hai

wadaye tifli bapa hone ko hai
shah khush hai qalb ko aaram hai
Noha - Beh Raha Hai Saamne

Nohaqan: Anj. Sabil e Masoomeen
(Raza Baqri)
Download Mp3
Listen Online