بولے پدر سے اکبر برچھی نہ کھینچنا
ہے جان اب لبوں پر برچھی نہ کھینچنا

بابا نظر کو پھیر لو دم ٹوٹنے لگا
برچھی کے پھل سے خون ہے دل کا رُکا ہوا
اُبلے گا خوں زمین پر برچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

میں نے تمہیں بُلایا تھا تا کہ میں کہہ سکوں
بالکل نہ غم کرو دل کو ہے اب سکوں
بیٹھے رہو یہاں مگربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

اماں کو یہ خبر نہ ہو میرے سِناں لگی
غش آ گیا ہے بس ذرا شدت کی پیاس کی
میں آ رہا ہوں جائو گھربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

بولے حسین باپ کو بہلا رہے ہیں آپ
معلوم ہے کے یہاں سے کہاں جا رہے ہیں آپ
کہتے ہو منہ کو پھیر کربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

سانسیں اُکھڑ رہی تو مدہم ہے نبض بھی
کرتے ہو آہ ہم کو ہے تاکید صبر کی
کہتے ہو تھام کے جگربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

اکبر پُکارے باپ سے دل کو سنبھالیئے
ٹوٹی سِناں کلیجے میں رہنے ہی دیجیئے
نکلے گا ساتھ میں جگربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

مولا نے یا علی کہا دل کو سنبھال کر
پھر خود ہی لڑکھڑا گئے برچھی نکال کر
کہتا رہا جواں پسربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔

ریحان ساتھ برچھی کے دل بھی نکل پڑا
پڑھتے رہے حسین بھی تا دیر مرثیہ
ماں کہتی آئی ننگے سربرچھی نہ کھینچنا
بولے پدر سے اکبر ۔۔۔۔۔


bolay padar se akbar barchi na khaynchna
hai jaan ab labon par barchi na khaynchna

baba nazar ko phayr lo dum tootne laga
barchi ke phal se khoon hai dil ka ruka hua
ubhlega khoon zameen par barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

maine tumhay bulaaya tha taake mai keh sakun
bilkul na gham karo dil ko hai ab sukoon
baithe raho yahan magar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

amma ko ye khabar na ho mere sina lagi
ghash aagaya hai bas zara shiddat ki pyas ki
mai aa raha hoo jao ghar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

bolay hussain baap ko behla rahe hai aap
maloom hai ke yan se kahan ja rahe hai aap
kehte ho moo ko phayr kar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

saansein ukhad rahi to madham hai nafz bhi
karte ho aah humko hai takeed sabr ki
kehte ho thaam ke jigar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

akbar pukare baap se dil ko sambhaliye
tooti sina kaleje may rehne hi dijiye
niklega saath may jigar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

maula ne ya ali kaha dil ko sambhaal kar
phir khud hi ladkhada gaye barchi nikaal kar
kehta raha jawan pisar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....

rehan saath barchi ke dil bhi nikal pada
padthe rahe hussain bhi ta dayr marsiya
maa kehti aayi nange sar barchi na khaynchna
bolay padar se akbar....
Noha - Barchi Na Khaynchna
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online