بعدِ شِہ زینبِ دلگیر نے کیا کیا دیکھا

حق پرستوں کا وفاداروں کا اور پیاروں کا
شاہِ لولاک پہ چلتے ہوئے خنجر دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

چادریں چھین کے کفاروں نے لُوٹے گھرکو
سر برہنہ شاہِ لولاک کا کنبہ کا دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

شمر نے چھینے گوہر منہ پہ تماچے مارے
خون کانوں سے سکینہ کا ٹپکتا دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

اک رسن میں کیا پابند بڑے چھوٹوں کو
طوق زنجیر میں بیمار کو جکڑے دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

ہائے جس شہر میں شہزادی کہا جاتی تھی
خود کو اس کوفے میں بے مکنہ و چادر دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

قید میں مر گئی گھُٹ گھُٹ کے سکینہ آخر
مرقد ایک چھوٹا سا زندان میں بنتا دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔

ہائے شبیر نے اور زینب و کبریٰ نے انیس
وقت کے ساتھ زمانے کو بدلتا دیکھا
بعدِ شِہ ۔۔۔۔۔


baad-e-sheh zainab-e-dilgeer nay kya kya dekha

haq paraston ka wafadaron ka aur pyaron ka
shah-e-lowlaak pe chalte hue khanjar dekha
baad-e-sheh....

chaadaray cheen ke kuffaro nay lootay ghar ko
sar barehna shahe laulaak ka kumba dekha
baad-e-sheh....

shimr ne cheenay gowhar moo pay tamachay maaray
khoon kaano se sakina ka tapakta dekha
baad-e-sheh....

ek rasan may kiya paaband bade choton ko
tauq zanjeer may beemaar ko jakde dekha
baad-e-sheh....

haaye jis shehr may shehzaadi kaha jaati thi
khud ko is koofay may be-makna o chaadar dekha
baad-e-sheh....

qaid may margayi ghut ghut ke sakina aakhir
markhad ek chota sa zindaan may banta dekha
baad-e-sheh....

haye shabbir ne aur zainabo kubra ne anees
waqt ke saath zamanay ko badalta dekha
baad-e-sheh....
Noha - Baad e Sheh Zainab

Shayar: Anees