اشکِ غم میں ہیں نہاں کرب کے منظر کتنے
چند قطروں میں سمٹ آئے سمندر کتنے

جانثارانِ حُسینی ہیں پرکھ لے دنیا
ہم بھی دیکھیں کے تیرے پاس ہیں خنجر کتنے
اشکِ غم میں ۔۔۔

سر تو زخمی ہوا اپنا یہ مگر جان گئے
اس کمیںگاہ سے پھینکے گئے پتھر کتنے
اشکِ غم میں ۔۔۔

نام اللہ کا لینے کے لیئے معاذاللہ
لوگ تعمیر کیئے بیٹھے ہیں خیبر کتنے
اشکِ غم میں ۔۔۔

اُلفتِ آل کا دنیا نے صلہ خوب دیا
لُٹ گئے کتنے مکیں خاک ہوئے گھر کتنے
اشکِ غم میں ۔۔۔

اک عالم ہے کہ روتا ہے غمِ سرور میں
بندھ باندھے جگر آپ تو گھر گھر کتنے
اشکِ غم میں ۔۔۔


ask e gham may hai neha karb ke manzar kitne
chand khatron may simat aaye samandar kitne

jaanisarane hussaini hai parakhle dunya
hum bhi dekhe ke tere paas hai khanjar kitne
ask e gham may....

sar to zakhmi hua apna ye magar jaan gaye
kis kamigaah se phayke gaye phattar kitne
ask e gham may....

naam allah ka lene ke liye maaz-allah
log tameer kiye baithe hai khyber kitne
ask e gham may....

ulfat e aal ka dunya ne sila khoob diya
lutgaye kitne makeen khaak huye ghar kitne
ask e gham may....

ek aalam hai ke rota hai ghame sarwar may
bandh baandhenge jigar aap to ghar ghar kitne
ask e gham may....
Noha - Ashk e Gham May Hai

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online