اماں کب گھر جائیں گے
قید میں کیا مر جائیں گے

صبح و پرندے جاتے ہیں
شام کو واپس آتے ہیں
کیا ہم بھی گھر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

باپ کا سر بے پیروں میں
بھائی ہے زنجیروں میں
کیسے لیکر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

خواب میں بابا آئے تھے
مجھ سے لپٹ کر کہتے تھے
خود تمہیں لیکر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

موت کا سر پر ہے سایہ
ایسا لگتا ہے بھیا
قبر بنا کر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

میں نہیں ہر گز مانوں گی
بس اک شرط پہ جائوں گی
عموں لیکر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

شاہ کا لاشہ میداں میں
اہلِ حرم ہیں زنداں میں
ہم تو یہیں مر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔

مر گئی اک دن وہ انور
جو یہ کہتی تھی اکثر
قبرِ نبی پر جائیں گے
اماں کب گھر ۔۔۔۔۔


amma kab ghar jayenge
qaid may kya mar jayenge

subho parinde jaate hai
sham ko wapas aate hai
kya hum bhi ghar jayenge
amma kab ghar...

baap ka sar be-peeron may
bhai hai zanjeeron may
kaise lekar jayenge
amma kab ghar...

khwab may baba aaye thay
mujhse lipat kar kehte thay
khud tumhay lekar jayenge
amma kab ghar...

maut ka sar par hai saaya
aisa lagta hai bhaiya
qabr banakar jayenge
amma kab ghar...

mai nahi hargiz maanungi
bas ek shart pa jaungi
ammu lekar jaayenge
amma kab ghar...

shaah ka laasha maidan may
ahle haram hai zindan may
hum to yahin mar jayege
amma kab ghar...

mar gayi ek din wo anwar
jo ye kehti thi aksar
qabre nabi par jaayenge
amma kab ghar...
Noha - Amma Kab Ghar
Shayar: Anwar Zahir, Anwar Meeruti
Nohaqan: Shareef Hussain(Lillay)
Download Mp3
Listen Online