ہائے کیا عالمِ تنہائی ہے
اب آخری رُخصت کو چلے سیدِوالا
کہرام تھا دل ہوتے تھے غم سے تہوبالا
شبیر نے گودی سے سکینہ کو اُتارا
غازی کو کبھی اکبر و قاسم کو پکارا
بابا کو قسم دے کے بُلاتی تھی سکینہ
سر پیٹتی پیچھے چلی جاتی تھی سکینہ

اچھے میرے بابا ہائے کیا عالمِ تنہائی ہے
اچھے میرے بابا نہ سکینہ سے چھپانہ
کہیںدور نہ جانا
دل روتا ہے کیوںپہنا ہے ملبوس پُرانہ
کہیںبھول نہ جانا

اس طرح سفر پر کوئی جاتا نہیں دیکھا
پہنے تمہیں ایسا کبھی کُرتا نہیں دیکھا
میں جان گئی آج ہے مقتل میں ٹھکانہ
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

شہہ بولے میں قربان میری جان سکینہ
اک وعدہ ہے جو آج نبھانہ ہے سکینہ
خیموں سے نکل کر نہ ہمیں ڈھونڈنے آنا
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

کل رات سے بے چین تھے میں دیکھ رہی تھی
میں سینے پہ لیٹی تھی مگر سوئی کہاں تھی
اب سمجھی تمہیں ہم سے بہت دُور ہے جانا
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

آتا ہے نظر حال غریبی کا تمہاری
لگتا ہے یہ سامان یتیمی کا ہماری
بابا ہمیں جینے نہیں دے گا یہ زمانہ
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

اکبر کبھی اصغر کبھی قاسم نے رُلایا
جو رن کو گیا آج پلٹ کر نہیں آیا
بھولی نہیں اب تک میں چچا جان کا جانا
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

پہلو سے شہہ دیں کے نہ ہٹتی تھی سکینہ
دامن کبھی قدموں سے لپٹتی تھی سکینہ
تڑپاتا ہے یہ آپ کا دامن کو چھڑانا
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔

اے سرور و ریحان یہ کہنے لگے سرور
ہم بھی وہیں جاتے ہیں جہاں سوتے ہیں اصغر
بیٹی پھپی اماں کو نہ رو رو کے رُلانا
کہیںبھول نہ جانا
اچھے میرے بابا۔۔۔


haye kya aalam e tanhai hai
aab aakhri ruqsat ko chalay sayyede wala
kohram tha dil hotay thay gham se taho bala
shabbir ne godhi se sakina ko utara
ghazi ko kabhi akbar o qasim ko pukara
baba ko qasam de ke bulaati thi sakina
sar peet-ti peeche chali jaati thi sakina

achay mere baba haye kya aalam e tanhai hai
achay mere baba na sakina se chupana
kahin bhool na jana
dil rota hai kyun pehna hai malboos purana
kahin bhool na jana

is tarha safar par koi jaata nahi dekha
pehne tumhe aisa kabhi kurta nahi dekha
mai jaan gayi aaj hai maqtal may thikana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

sheh bolay mai qurban meri jaan sakina
ek wada hai jo aaj nibhana hai sakina
qaimo se nikal kar na hamay dhoondne aana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

kal raat se bechain thay mai dekh rahi thi
mai seene pe layti thi magar soyi kahan thi
ab samjhi tumhay hum se bohat door hai jaana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

aata hai nazar haal ghareebi ka tumhari
lagta hai ye samaan yateemi ka hamari
baba hamay jeene nahi dega ye zamana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

akbar kabhi asghar kabhi qasim ne rulaaya
jo ran ko gaya aaj palat kar nahi aaya
bhooli nahi ab tak mai chacha jaan ka jaana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

pehlu se shahe deen ke na hat-ti thi sakina
daaman kabhi qadmo se lipat-ti thi sakina
tadpata hai ye aap ka daaman ko chudana
kahin bhool na jana
achay mere baba....

ay sarwar o rehan ye kehne lagay sarwar
hum bhi wahin jaate hai jahan sotay hai asghar
beti phuphi amma ko na ro ro ke rulaana
kahin bhool na jana
achay mere baba....
Noha - Achay Mere Baba Na Sakina
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online