جب اہلِ حرم آئے مدینے میں پلٹ کر
صغراسے کہا ثانیئِ زہرا نے لپٹ کر

اچھا ہوا صغرا تُو میرے ساتھ نہیں تھی
زینب کا تھا نوحہ ہم لُٹ گئے صغرا
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

اس بات پہ کرتی ہوں ادا شکر کا سجدا
ہم میں سے کسی کا تو سلامت رہا پردا
کس طرح بتائو تجھے دل پھٹتا ہے میرا
سادات کی غیرت کا تقاضہ نہیں صغرا
بس اتنا ہی کہتی ہوں ردا جب کی چھنی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

تُو پوچھتی ہے سرخ ہے کیوں آپ کی چادر
آتجھ کو بتائو میرے مظلوم کی دختر
جب خیمے میں شہ لائے لاشِ علی اکبر
میں ایسے گری لاش کے پہلو میں تڑپ کر
اکبر کے لہو سے یہ ردا سرخ ہوئی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

کس طرح رہی ہوگی تو اِس گھر میں اکیلی
احساس مجھے ہے تیرے اس درد کا بیٹی
لیکن تو ضعیفہ ہوئی فرقت میں پدر کی
تجھ کو تو خبر صرف شہادت کی ہے پہنچی
میںشہ کا گلا کٹتے ہوئے دیکھ رہی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

کیابغض ہے باباسے مسلمانوں کو جانے
پھر آئے تھے گھر فاطمہ زہرا کا جلانے
سب آکے کھڑے ہوگئے بیکس کے سرہانے
اُسوقت ستمگاروں سے عابد کو بچانے
بیٹی پھپی اماں تیری شولوں پہ چلی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

تنہائی میں لے جاکے کبھی پوچھنا ماں سے
کس طرح سے گزریںتیری ماںبہنیں واہاں سے
باتیں جہاں سب کرتے ہیں پتھر کی زباںسے
شب کو بھی گزرنا بڑا مشکل جہاں سے
بے پردہ واہاں دن میں ہر اک بی بی کھڑی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

نانا کا مدینہ ہے نہیں خوف کسی کا
دل کھول کے رو کون تجھے مارے گادُرہ
لیکن کبھی بابا پہ جو رو تی تھی سکینہ
سیلی کبھی دُرہ کبھی کھاتی تھی تماچہ
رو نے پہ بھی معصومہ کے پابندی لگی تھی
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔

اے میر تکلم وہ قیامت تھی قیامت
زینب نے سنائی جو سکینہ کی شہادت
سادات پہ گزرا تھا عجب المِ غربت
زنداں کے اندھیرے میں بنائی گئی تربت
دم توڑتی بچی نے بھی یہ بات کہی تھی.
اچھا ہوا صغر۔۔۔۔


jab ahle haram aaye madine may palay kar
sughra se kaha saniye zehra ne lipat kar

acha hua sughra tu mere saath nahi thi
zainab ka tha noha hum lut gaye sughra
acha hua sughra....

is baat pe karti hoo ada shukr ka sajda
hum may se kisi ka to salamat raha parda
kis tarha bataun tujhe dil phat ta hai mera
sadaat ki ghairat ka taqaza nahi sughra
bas itna hi kehti hoo rida jab ke chini thi
acha hua sughra....

tu poochti hai surkh hai kyun aap ki chadar
aa tujhko bataun mere mazloom ki dukhktar
jab qaime may sheh laaye laashe ali akbar
mai aise giri laash ke pehlu may tadap kar
akbar ke lahoo se ye rida surkh hui thi
acha hua sughra....

kis tarha rahi hogi tu is ghar may akeli
ehsaas mujhe hai tere is dard ka beti
lekin tu zaeefa hui furqat may padar ki
tujhko to khabar sirf shahadat ki hai pahunchi
mai sheh ka gala kat-te hue dekh rahi thi
acha hua sughra....

kya bughz hai baba se musalmano ko jaane
phir aaye thay ghar fathema zehra ka jalane
sab aake khade hogaye bekas ke sarhane
us waqt sitamgaron se abid ko bachane
beti phupi amma teri sholo pe chali thi
acha hua sughra....

tanhai may le jaake kabhi poochna maa se
kis tarha se guzri teri maa behne wahan se
baatein jahan sab karte hai pathar ki zuban se
shab ko bhi guzarna bada mushkil hai jahan se
be-parda din may wahan har ek bibi khadi thi
acha hua sughra....

nana ka madina hai nahi khauf kisi ka
dil khol ke ro kaun tujhe maarega durra
lekin kabhi baba pe jo roti thi sakina
sayli kabhi durra kabhi khati thi tamacha
rone pe bhi masoom ke pabandi lagi thi
acha hua sughra....

ay mir takallum wo qayamat thi qayamat
zainab ne sunayi jo sakina ki shahadat
sadaat pe sughra tha ajab aalam e ghurbat
zindan ke andhere may banayi gayi turbat
dam tod ti bachi ne bhi ye baat kahi thi
acha hua sughra....
Noha - Acha Hua Sughra
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online