شاہ کی لاڈلی جب قیدی زندان ہوئی
رؤئی گھبرائی بہت اور پریشان ہوئی
قید خانے کی گھٹن  موت کا سامان ہوئی
جان لگتا تھا کہ معصوم کی بے جان ہوئی
لاش شببر کی مقتل میں تڑپ جاتی تھی
قید خانے سے بچی کی صدا آتی تھی

اب مجھے کوئی سکینہ نہیں کہتا بابا
قیدی کہتا ہے کوئی کوئی یتیما بابا

میں بیاں کیسے کروں اپنی مصیبت تم سے
کیا کروں اپنے طمانچوں کی شکایت تم سے
سنتی ہوں دادی نے کھایا تھا طمانچہ بابا
....اب مجھے کوئی

نیل رخساروں پہ بینائ بھی جسکی کم ہو
عمر ہو چار برس اور کمر میں خم ہو
أپ نے دیکھی ہے کیا ایسی ضعیفی بابا
....اب مجھے کوئی

خون بےشیر سے اندازہ کیا تھا میں نے
آپ کا چہرہ تو پہچان لیا تھا میں نے
آپ پہچانو گے کیسے میرا چہرہ بابا
....اب مجھے کوئی


آپ تھے دور تو میں سارے ستم سہتی  رہی
رو پڑی کوفہ کے دربار میں میں سہ نہ سکی
آپ کے سامنے جب نے مارا بابا
...اب مجھے کوئی

وہ تو بیمار تھی مر جاتی سفر میں آکے
دفن کرتے اسے بازار میں بھیا کیسے
یہ تو اچھا ہوا آی نہیں صغرا بابا
...اب مجھے کوئی

میری آنکھوں سے بہے جاتے تھے آنسوں اس دم
ہاتھ بھی میں نے لگایا نہیں دادی کی قسم
دینا چاہا تھا مجھے لوگوں نے صدقہ بابا
...اب مجھے کوئی

اس گھڑی ڈھونڈ رہی تھی میں چچا جاں کا سر
کیسے بتلاؤں کہ کیا گزری تیری بیٹی پر
مجھکو ظالم نے کنیزی میں جو مانگا بابا
...اب مجھے کوئی

بین یہ کرتے ہی خاموش ہوئی وہ اکبر
آج تو جاینگے ساتھ اپنے مجھے بھی لیکر
اپ کو میری قسم کیجئے وعدہ بابا
....اب مجھے کوئی....اب مجھے کوئی


shah ki laadli jab qaidiye zindan hui
royi ghabrayi bahot aur pareshan hui
qaid khane ki ghutan maut ka saaman hui
jaan lagta tha ke masoom ki bejaan hui
laash shabbir ki maqtal may tadap jaati thi
qaid khane se bachi ki sada aati thi

ab mujhe koi sakina nahi kehta baba
qaidi kehta hai koi koi yateema baba

mai bayan kaise karoo apni musibat tumse
kya karoo apne tamachon ki shikayat tumse
sunti hoo dadi ne khaya tha tamacha baba
ab mujhe koi...

neel rukhsaron pe beenyai bhi jiski kam ho
umr ho chaar baras aur kamar may kham ho
aap ne dekhi hai kya aisi zaeefa baba
ab mujhe koi...

khoon e baysheer se andaza kiya tha maine
aap ka chehra to pehchan liya tha maine
aap pehchanoge kaise mera chehra baba
ab mujhe koi...

aap thay door to mai saare sitam sehti rahi
ro padi koofe ke darbar may mai seh na saki
aap ke saamne jab shimr ne maara baba
ab mujhe koi...

wo to bemaar thi mar jaati safar may aake
dafn karte usay bazaar may bhaiya kaise
ye to acha hua aayi nahi sughra baba
ab mujhe koi...

meri aankhon se bahe jaate thay aansu us dam
haath bhi maine lagaya nahi dadi ki qasam
dena chaha tha mujhe logon ne sadqa baba
ab mujhe koi...

us ghadi dhoond rahi thi mai chacha jaan ka sar
kaise batlaun ke kya guzri teri beti par
mujhko zaalim ne kaneezi may jo maanga baba
ab mujhe koi...

bayn ye karte hi khamosh hui wo akbar
aaj to jayenge saath apne mujhe bhi lekar
aap ko meri qasam ki jiye wada baba
ab mujhe koi...
Noha - Ab Mujhe Koi
Shayar: Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online