آج زینب ہے رنج و محن میں
کل جُدائی ہے بھائی بہن میں
بھائی مرنے کو جاتے ہیں رَن میں
کل جُدائی ہے بھائی بہن میں

بھائی بھائی پُکاروں میں بن میں
بھائی کا نام ہے پنجتن میں
یہ تو کلمہ رہے گا دہن میں
کل ۔۔۔۔۔

آلِ احمد پہ کل ہے قیامت
ہو گا تاراج باغِ رسالت
رات گزارے گی اب بے وطن میں
کل ۔۔۔۔۔

شکر کا کلمہ بھائی پڑھے گا
حلقِ نازک پہ خنجر پھِرے گا
زخم ہوں گے ہزاروں سے تن میں
کل ۔۔۔۔۔

برچھی کھائے گا سینے پہ اکبر
یہ ہے واللہ شکلِ پیعمبر
روحِ زہرا بھی تڑپے گی رن میں
کل ۔۔۔۔۔

تیر سے حلقِ اصغر چھِدے گا
بوند پانی نہ اُس کو ملے گا
شِہ کے ہاتھوں پہ تڑپے گا رن میں
کل ۔۔۔۔۔


aaj zainab hai ranjo mehan may
kal judaai hai bhai behan may
bhai marne ko jaate hai ran may
kal judaai hai bhai behan may

bhai bhai pukarun mai ban may
bhai ka naam hai pajetan may
ye to kalma rahega dahan may
kal.......

aale ahmed pe kal hai qayamat
hoga taraaj baghe risalat
raat guzaregi ab bewatan may
kal.........

shukr ka kalma bhai padega
halqe nazuk pe qanjar phirega
zakhm honge hazaron se tan may
kal........

barchi khayega seene pe akbar
ye hai wallah shakle payambar
roohe zahra bhi tadpegi ran may
kal..........

teer se halqe asghar chidega
boond paani na usko milega
sheh ke haaton pe tadpega ran may
kal........
Noha - Aaj Zainab Hai